Home / کالم / انوکھا انٹرویو#3

انوکھا انٹرویو#3

الحمد للہ علی سابغ نعم اللہ۔۔۔۔

تحریر: انعم توصیف، کراچی
عنوان: انوکھا انٹرویو#3

السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ! میرے پیارے ساتھیوں آپ کی دوست انو منو آپ کے لیے ایک بار پھر لے کر آٸی ہے ایک دل چسپ اور منفرد انٹرویو۔ آج کے مہمان ”وہ“ ہیں جن کا ہم سب کو بہت انتظار رہتا ہے۔ جن کے لیے ہم پورا سال انتظار کرتے ہیں۔ کیا؟؟؟ آپ لوگ سمجھ گٸے۔ ماشاءاللہ میرے ننھے ساتھی تو بہت سمجھدار ہیں۔ جی آپ نے صحیح پہچانا۔ جن لوگوں نے نہیں پہچانا ان کے لیے نام، ہماری مہمان خود ہی بتاٸیں گی۔
انو منو: اَلسَلامُ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ.
مہمان: وَعَلَيْكُم السَّلَام وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎! مجھے بہت خوشی ہے کہ آج آپ نے مکمل سلام کیا۔ آپ کو مزید نیکیاں ملیں گی ان شاء اللہ۔

انو منو: جی الحَمْدُ ِلله! میرے استاد صاحب نے مجھے تاکید کی ہے کہ مکمل سلام کیا کروں۔ ہمارے نبی پاکﷺ بھی ایسے ہی سلام کیا کرتے تھے۔ آپ اپنا نام ہمارے قارٸین کو بتاٸیے۔
مہمان: جی میرا نام ہے ”عید الفطر“۔ مجھے عام طور پر میٹھی عید بھی کہا جاتا ہے۔ حدیث شریف میں مجھے ”یوم الجاٸزہ“ بھی کہا گیا ہے۔

انو منو: آپ اپنے نام کے معنی بتادیجیے۔
مہمان: میرے معنی ہیں بار بار لوٹ کر آنے والی۔ میں ہر سال آپ لوگوں سے ملنے آتی ہوں۔

انو منو: کس تاریخ کو ملنے آتی ہیں؟
مہمان: جی میں یکم شوال کو آپ سب کے گھر آتی ہوں۔

انو منو: آپ نے بتایا کہ آپ کو یوم الجاٸزہ بھی کہا گیا ہے۔ اس کی کیا وجہ ہے؟
مہمان: جاٸزہ عربی میں انعام کو کہا جاتا ہے۔ یوم الجاٸزہ یعنی انعام کا دن۔ رمضان المبارک کے پورے مہینے مسلمان اللہ کے حکم کو پورا کرنے کے لیے روزے رکھتے ہیں۔ اللہ پاک خوش ہو کر مجھے بطورِ انعام آپ لوگوں کو دیتے ہیں۔ اللہ تعالی اپنے فضل سے اس دن اپنے بندوں کی مغفرت فرماتے ہیں۔

انو منو: آپ ہمیں یہ بتاٸیے کہ چاند رات کو کیا ہم آپ کے آنے کی خوشی میں بازاروں میں گھوم پھر سکتے ہیں؟
مہمان: چاند رات کو اللہ پاک پورے مہینے آپ لوگوں کے کیے گٸے اعمال کا حساب کتاب کرتے ہیں. اس رات آپ لوگوں کو اور زیادہ عبادت کرنی چاہیے نہ کہ بازاروں میں گھوم پھر کر اس قیمتی وقت کو ضاٸع کرنا چاہیے۔

انو منو: آپ ہمیں یہ بتاٸیں کہ ہمیں عید الفطر یعنی آپ جب آٸیں تو کیا کرنا چاہیے۔
مہمان: آپ سب کو سب سے پہلے تو اللہ کا شکر ادا کرنا چاہیے کہ اللہ تعالی نے آپ کو مجھ جیسا خوشی کا دن عطا کیا۔

انو منو: جی وہ تو ان شاء اللہ ہم سب کریں گے لیکن مجھے جسمانی اعتبار سے بتاٸیے کہ ہم کیا اہتمام کریں۔
مہمان: میرا استقبال کرنےکے لیے آپ لوگوں کو صبح جلدی اٹھنا چاہیے۔ غسل کرنا چاہیے۔ عمدہ سے عمدہ کپڑے جو آپ کے پاس ہوں وہ پہننے چاہیے۔ خوشبو(عطر) لگانی چاہیے۔

انو منو: ہمارے ننھے ساتھیوں کو عید کی نماز پڑھنے کے لیے عید گاہ جانا چاہیے؟
مہمان: جی جو ہمارے چھوٹے چھوٹے بھاٸی ہیں انہیں اپنے بڑوں کے ساتھ عید گاہ جاکر نماز ادا کرنی چاہیے۔ عیدگاہ جانے سے پہلے کوٸی میٹھی چیز جیسے کھجور وغیرہ کھالینا چاہیے۔ عید گاہ جانے سے پہلے صدقہ فطر ادا کرنا چاہیے۔ آپ کے بڑے اگر بھول رہے ہوں تو انہیں فورا سے یاد دلاٸیے کہ نماز سے پہلے صدقہ دینا ہے۔

انو منو: ہم ان شاء اللہ یاد دلاٸیں گے۔
مہمان: اور ایک بات یہ کہ جس راستے سے عید گاہ جایا جاٸے۔ نماز پڑھ کر اس راستے سے نہیں بلکہ دوسرے راستے سے واپس آیا جاٸے۔

انومنو: کیا عیدگاہ جاتے ہوٸے ہمیں اللہ کا ذکر کرنا چاہیے؟
مہمان: جی راستے میں تکبیرِ تشریق آہستہ آواز میں پڑھنی چاہیے۔

انو منو: یہ تکبیرِ تشریق کیا ہوتی ہے؟
مہمان: تکبیر تشریق میں آپ کو پڑھ کے سناتی ہوں۔

اﷲُ اَکْبَرُ اﷲُ اَکْبَرُ لَا اِلٰه اِلَّا ﷲُ وَﷲُ اَکْبَرُ ﷲُ اَکْبَرُ وَِﷲِ الْحَمْد.

انو منو: ماشاءاللہ آپ نے بہت اچھے انداز میں ہمیں تکبیر تشریق سناٸی ہے۔
مہمان: آپ سب لوگ بھی اسے یاد کرلیجے۔

انو منو: عیدگاہ تو صرف ابو، بھیا، چچا جاتے ہیں۔ ان کو یاد کرنا چاہیے۔
مہمان: تکبیر تشریق میں اللہ پاک کی بڑاٸی بیان کی جاتی ہے۔ میری بہن جب آپ لوگوں کے پاس آٸے گی تب آپ سب پہ اس کو پڑھنا لازمی ہوگا۔

انو منو: آپ کی بہن؟ آپ کی کوٸی بہن بھی ہے؟
مہمان: جی ہاں! ہم دو بہنیں ہیں۔ جب وہ آٸیں گی تب آپ ان کا بھی انٹرویو لیجیے گا۔

انو منو: اگر ہمارے پیارے قارٸین کہیں گے تو آپ کی بہن کا انٹرویو بھی میں ضرور لوں گی ان شاء اللہ۔
مہمان: آپ ہم سب کا تعارف ہمارے ننھے دوستوں سے کروارہی ہیں اس کے لیے جزاک اللہ خیرا کثیرا انو منو۔

انو منو: آمین۔ آپ ہمارے دوستوں کو کوٸی پیغام دینا چاہیں گی؟
مہمان: آپ سب میرے آنے کی خوشی میں جب تیاریاں کریں گے تو اپنے آس پاس ان لوگوں کا بھی خیال رکھیے گا جو غریب ہیں اور غربت کی وجہ سے میرے آنے کی تیاری نہیں کرپاتے۔ سب سے اہم بات یہ کہ میری خوشی میں آپ لوگ ہمارے ایک ساتھی کو بھول مت جاٸیے گا۔

انو منو: آپ کس ساتھی کی بات کر رہی ہیں؟
مہمان: میں ”نماز“ کی بات کر رہی ہوں۔ میری خوشی میں اگر آپ نماز کو بھول جاٸیں گے تو یہ بات اللہ پاک کو بالکل اچھی نہیں لگے گی۔ آپ خوب مزے مزے کے کھانے کھاٸیں، خوب کھیلیں، اپنے دوستوں اور رشتے داروں سے ملیں، خوب مزے کریں۔ مگر نماز ادا کرنا نہ بھولیں۔

انو منو: ہم سب ان شاء اللہ آپ کی نصیحت کو یاد رکھیں گے اور اس پہ عمل بھی کریں گے۔
مہمان: اب میں، اجازت چاہوں گی۔ چند دن بعد مجھے آپ سب سے ملنے آنا ہی ہے ان شاء اللہ۔ تب تک کے لیے اللہ حافظ۔

یہ تھیں ہماری آج کی مہمان ”عید الفطر“۔ مجھے امید ہے کہ آپ کو ان کے بارے میں جان کر اچھا لگا ہوگا۔ بہت جلد آپ کی خدمت میں پھر حاضر ہوں گی ایک اور انوکھے انٹرویو کے ساتھ ان شاء اللہ۔۔اپنی دوست انو منو کو رکھیے گا دعاٶں میں یاد۔
دعا کیجیے،دعا دیجیے اور دعا لیجیے۔ عید مبارک۔۔۔
اللہ حافظ

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے