Home / کالم / قربانی یا غریب کی مدد

قربانی یا غریب کی مدد

قربانی کی جائے …؟
یا !
غربا کی مدد …؟
التماس دعا :
سجاد حسین
🌺🌺🌺🌺
کچھ سالوں سے دیکھ رہا ہوں عید قربان آتے ہی یہ ٹرینڈ چل پڑا ہے کہ ” جی قربانی کے جانور جن پیسوں سے آنا ہیں اس سے کسی غریب کی مدد کر دی جائے ”

غربا کی مدد کرنا صدقہ کہلاتا ہے (جو عبادت بھی ہے ) لیکن قربانی ایک مستحب عبادت ہے ، جو صدقہ سے افضل ہے…
معلوم نہیں دو عبادتوں کو کیوں ٹکرانے کی باتیں کی جاتی ہیں ، یہ المیہ ہے ہماری قوم کا کہ جب ہم نے نیا موبائل یا اپنی ذاتی ضرورت کی کوئی شئے لینی ہو تو تب ہمیں غربا یاد نہیں آتے ،
اسکے علاوہ عید الفطر پر نئے کپڑے ، جوتے اور دوسروں کیلیے گفٹس لیتے وقت یہ نیک خیال کیوں نہیں آتا لوگوں کے ؟
آپ قربانی کے گوشت سے بھی غربا کی مدد کر سکتے ہیں یا تب بھی جب آپ اپنی کسی خواہش کو مار دیں …

قران میں اللہ نے اس قربانی کی عظمت کو بارہا واضح کیا ہے کہ

اللہ کے پاس ان قربانیوں کے گوشت اورخون نہیں پہنچتے ہاں تمہارا تقوی یعنی جذبہ اطاعت پہنچتا ہے۔(١٧)

اسکے علاوہ خداوند متعال نے ارشاد فرمایا ہے :

” اور کسی مومن مرد اور مومن عورت کو حق نہیں ہے کہ جب اللہ اور اس کا رسول کوئی امر مقرر کر دیں تو وہ اس کام میں اپنا بھی کچھ اختیار سمجھیں اور جو کوئی خدا اور اس کے رسول کی نافرمانی کرے وہ صریح گمراہ ہو گیا (احزاب ٣٦)

قربانی ایک عبادت ہے اور عبادت کا اصول یہ ہے کہ اسے بلکل ویسے ادا کیا جائے جیسے اللہ کے حکم سے نبی نے ہمیں بتایا ،
اس بات میں جو الجھتے ہیں کہ قربانی کی بجائے غربا کی مدد کی جائے انکے لیے قران سے جواب حاضر ہے کہ :
لکل امۃ جعلنا منسکا لیذکروا اسم اللہ علی ما رزقھم من بہیمۃ الانعام (سورۃ الحج)

ہم نے ہر امت کے لئے قربانی مقرر کی تاکہ وہ چوپائیوں کے مخصوص جانوروں پر اللہ کا نام لیں جو اللہ تعالی نے عطا فرمائے۔
اگر گوشت کی تقسیم خدا کے بتائے ہوئے منصفانہ طریقے سے کی جائے تو یہ بھی غربا کی مدد ہے ..
تو وہ لوگ جو سنت رسول کے مقابلے میں ایک ایسے عمل کو لا کر کھڑا کر دیتے ہیں جسکا حکم بھی ہمیں اسی دین نے دیا ہے یقین مانیں یہ فسادی لوگ ہیں جنکو اپنی ذاتی خواہشات پوری کرتے وقت تو غریب نظر نہیں آتے مگر نبی کی سنت ادا کرتے وقت یاد آ جاتے ہیں ..
خدا ہمیں ایسے افراد سے دور رکھے جو دین میں نئی نئی باتیں گھڑ کے لوگوں کو گمراہ کرتے ہیں
جزاکم اللہ ..

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے