Home / پاکستان / میلہ بابا گلے شاہ,,88 گ ب ، روڑا۔۔

میلہ بابا گلے شاہ,,88 گ ب ، روڑا۔۔

*88 گ ب ، روڑا۔۔۔میلہ بابا گلے شاہ ۔۔۔یا ۔۔۔بابا دھکے شاہ*
۔
*تحریر :ڈاکٹر اظہار احمد گلزار*
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔18/ ہاڑ ۔۔یکم جولائی
88 گ ب ۔روڑا ۔۔ میلہ بابا گولا ۔۔المعروف بابا دھکے شاہ ۔۔۔۔۔
چک نمبر 87 اور 88 گ ب روڑا کی حدود بندی پر ایک سڑک ۔۔۔۔ 87 گ ب سے ڈجکوٹ کی طرف جائیں ۔۔تو ایک کچی سڑک بائیں طرف دلاور خان کی اراضی سے حکیم افضل خان اور چودھری خوشید احمد کی اراضی کی طرف مڑ جاتی ہے تو اس کے برابر دوسری سڑک دائیں طرف مہر غلام رسول اور مہرمحمّد بوٹا آرائیں کی اراضی سے 88 گ ب اور 87 گ ب کے بیچ دونوں اطراف میں مشترکہ اراضی کی طرف مڑ جاتی ہے ۔۔۔۔اسی دونوں اطراف کی حد بندی پر ایک بہت بڑا برگد کا درخت ہے جو کم از کم 70 سال سے زائد عمر رکھتا ہو گا ۔۔۔۔۔اس تناور برگد کے درخت کے نیچے کئی سالوں سے ایک میلہ لگتا آ رہا ہے ۔۔۔کچھ لوگ اس میلے کو بابا گولے کا میلہ بھی کہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آج 18 ہاڑ ہے ۔۔اور یہاں 18 ہاڑ کو کئی سالوں سے ایک میلہ لگتا چلا آ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ لوگ اس میلے کو بابے دھکے شاہ کا میلہ بھی کہتے ہیں ۔۔۔کچھ لوگ کہتے ہیں کہ بابے دھکے شاہ نے یہاں بھی کچھ دیر قیام کیا تھا۔بابا دھکے شاہ کون تھا؟۔۔ کہاں سے آیا، اس بارے میں کوئی مصدقہ بات سامنے نہیں آئی۔جس کو سند کہا جا سکے۔کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ یہ کوئی مافوق الفطرت کی دنیا کا کوئی باشندہ ہے۔جس کو چند لوگوں نے دیکھا اور اپنے دیکھے پر یہ گواہی دی کہ یہ کوئی بشر نہیں، بلکہ ہواؤں کی دنیا کا کوئی نہ دکھائی دینے والی ہستی ہے، اس طرح چند لوگوں نے اپنے کہے پر اس کے نام پر ایک میلے کا انعقاد کیا۔روڑا اور بابے دی بیر میں ہونے والے میلے اسی سلسلے کی کڑیاں ہیں ۔۔۔
۔۔اور پھر وہ بابا 87 گ ب میں ظاہر ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس کو دیکھنے والوں نے شہادت دے کر اس کی یاد میں ایک میلہ کرانا شروع کر دیا جو تاحال اسی جذبے سے منعقد ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے بچپن میں جب چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت تک نواحی گاؤں چک 258 ر-ب لمبا پنڈ ۔۔میں پڑھتا تھا ۔۔۔اس وقت جب شدید بارشیں ہوتیں تو ہمیں ان دیہات کی پگ ڈنڈیوں سے پیدل لمبا پنڈ کے مڈل اسکول جانا پڑتا تھا ۔۔۔۔ہمیں ان راستوں سے گزر کر کھیتوں کھلیانوں پگ ڈنڈیوں پر قدم پھونک پھونک کر رکھتے ہوے اپنی منزل کی طرف بڑھنا پڑتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔واضح رہے کہ اس وقت ان دیہات نے ترقی کی منازل اتنی طے نہیں کیں تھیں ۔۔ جتنی آج طے کیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔تو اسی راستے پر یہ برگد کا گھنا سایا دار درخت بھی آتا تھا یہاں سے دن کے وقت بھی ہم ننھے طالب علموں کو گزرتے ہوے ڈر سا لگتا تھا۔۔۔۔۔میرے ساتھ اس وقت پڑھنے والوں میں میرے کزنز تایا زاد اور چچا زاد بھائی بھی ہوتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسکول کے اس دور میں راقم ( اظہار احمد گلزار) کے ساتھ ابرار احمد ، الطاف احمد ، اشتیاق احمد اور ذوالفقار احمد بھی ہوتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بات ہو رہی تھی اس بابا گلے شاہ کے میلے کی ۔۔۔۔۔۔ہم لوگ اپنے دور میں اس میلے کا نام بابا دھکے شاہ کا میلہ نمبرایک ہی سنتے آئے ہیں ۔۔۔۔۔دوسرا میلہ 87 گ ب میں رانا ریاست علی اپنے ڈیرے پر ہر سال ہاڑ کی پہلی جمعرات کو کرواتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یہ دونوں میلے تفریح وطبع کے لحاظ سے لوگوں کو فرواں مواقع مہیا کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔لوگ لنگر کھاتے ہیں ۔۔۔۔۔خوش گپیاں لگاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔قہقہے لگاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔کچھ لمحوں کے لیے اپنے اپنے غموں سے آزاد ہو جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں کہ ان لوگوں کو تفریح طبع کے مواقع کم میسر ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
میلہ ۔۔۔۔۔نام ہے ۔۔۔مل بیٹھنے کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ لوگ “کورونائی خوف ” کو پس پشت ڈال کر اپنے من کو ہلکا کر رہے ہیں ۔۔۔۔تفکرات سے چند لمحوں کے لیے خود کو آزاد کرا لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
بس ۔۔۔۔میلہ چار دناں دا ۔۔۔۔

میلہ میلیاں دا یاراں بیلیاں دا
کجھ سخیاں دا کجھ سہیلیاں دا
اک دن ساریاں ٹر جانا
بوہا مار کے ایناں حویلیاں دا

پیسے بنا نئیں کوئی اپنا
نئیں اعتبار یاراں بیلیاں دا

یار نسلی ساتھ نہیں چھڈدے بیلیاں دا
میلہ میلیاں دا ، یاراں بیلیاں دا
نبی، پیر، فقیر، امام ذادے
سنگ چھڈ گئے نیں یاراں بیلیاں دا
رانجھا بھائیاں نوں چھڈ فقیر بنیاں
ھیر چھڈ گئی پور سہلیاں دا
اک دن اساں پردیسیاں ٹر جانا
کنڈا مار کے ایناں حویلیاں دا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی ایک خواب ،سرائے اور میلہ ہی تو ہے۔میلہ گھڑی پل کا ہوتا ہے۔جس طرح خواب کسی وقت بھی ٹوٹ سکتا ہے،میلہ بھی اجڑ سکتا ہے۔کہتے ہیں میلہ دیکھنا ہو تو میلے میں گم نہیں ہونا چاہےے۔ میلے میں گم ہو کر میلہ نہیں دیکھا جاسکتا۔میلہ ، میلے سے ذرا ہٹ کر، کسی گوشے سے، دیکھا جاسکتا ہے۔یوں لگتا ہے جیسے ہم سب میلے کی ” بھول بھلیوں “ میں گم ہو چکے ہیں اور زندگی کی اس رونق اور ” ہلے گلے “ کو ہی سب کچھ سمجھ بیٹھتے ہیں۔آنکھ اس وقت کھلتی ہے جب موت کا نقارہ بج جاتا ہے۔۔۔
یار زندہ ۔۔صحبت باقی ۔۔۔۔
یہ باتیں دوستوں ، بھتیجوں اور نئی نسل کو اس دھرتی کی مٹی سے آگاہی کے طور پر قلمبند کیں ہیں ۔۔۔کہ لوگوں کے شغل اور مصرفیات کے اطوار کیا تھے اور کیا ہیں ۔۔۔یہ میلے صرف تھذیب و ثقافت کو زندہ رکھنے کے لیے ہوتے ہیں ۔۔قدیم رسموں، رواجوں کو ماننے والے اگر اس ثقافت کو زندہ رکھنا ضروری سمجھتے ہیں تو اپنے ساتھ اور لوگوں کو بھی شامل کر کے اپنی اس سوچ کو تقویت دیتے ہیں ۔۔۔۔۔آج کی نئی نسل اس طرح کے میلوں کو تفریح و طبع سے زیادہ اہمیت نہیں دیتی ۔۔۔۔۔۔
ماضی کے چہرے سے پردہ سرکانا کوئی آسان نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔نئی نسل کو ایسی رسوم سے واقفیت دلانا ہم سب کا فرض اور ذمہ داری ہے ۔۔۔
یہ ہے ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماضی سے سبق سیکھو ۔۔۔حال میں جیو ۔۔ ۔مستقبل پر نظر رکھو ۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بشکریہ ۔۔تصاویر و معلومات ۔۔۔۔۔رانا محمّد اظہر فقیر حسین ۔۔۔87گ ب
تحریر : اظہار احمد گلزار

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے