Home / اسلام / منصب امامت کی تبدیلی*

منصب امامت کی تبدیلی*

*درس قرآن نمبر 92*

*منصب امامت کی تبدیلی*

مدرس:
محمد عثمان شجاع آبادی

بسم اللہ الرحمن الرحیم
یَا بَنِیٓ اِسْرَآءِیْلَ اذْکُرُوْا نِعْمَتِیَ الَّتِیٓ اَنْعَمْتُ عَلَیْکُمْ وَاَنِّیْ فَضَّلْتُکُمْ عَلَی الْعَالَمِیْنَ (122)وَاتَّقُوْا یَوْمًا لَّا تَجْزِیْ نَفْسٌ عَنْ نَّفْسٍ شَیْءًا وَّلَا یُقْبَلُ مِنْہَا عَدْلٌ وَّلَا تَنْفَعُہَا شَفَاعَۃٌ وَّّلَا ہُمْ یُنْصَرُوْنَ (123)
*ترجمہ:*
اے بنی اسرائیل!میرے احسان کو یاد کرو جو میں نے تم پر کیے اور بے شک میں نے تمہیں سارے جہاں پر بزرگی دی تھی٭اوراس دن سے ڈرو جس دن کوئی بھی کسی کے کام نہ آئے گا اور نہ اس سے بدلہ قبول کیا جائے گا اور نہ اسے کوئی سفارش نفع دے گی اور نہ وہ مدد دیے جائیں گے۔
*ربط:*
اس سے پہلے اہل کتاب کی ناجائز خواہشا ت و عادات کا ذکر تھا ان آیات میں بنی اسرائیل کو تنبیہ کہی جارہی ہے۔
*تفسیر:*
سورۃ بقرہ کی چوتھے رکوع سے بنی اسرائیل سے خطاب کے بعد جن خاص مضامین کے ذکر کا سلسلہ چلا تھا وہ اب یہاں ختم ہوگیا ہے،آخر میں اس آیت کو لانے کا مقصد اس سارے مضامین کا خلاصہ بیان کرنا ہے تاکہ تمام مضامین کا اعادہ ہوسکے۔
پچھلے دس رکوعوں میں بنی اسرائیل کو خطاب کرکے ان کے تاریخی جرائم کو بیان کیا اور نزول قرآن کے وقت ان کی حالت کو بیان کرنے کے بعدانہیں بتادیا گیا کہ اللہ نے تمہیں جو فضیلت دی،جو تمہیں امامت کا منصب عطا کیا تھا اس کی تم نے ناقدری کی،اس منصب کا حق ادا نہیں کیا تم حق پرستی سے پھرگئے تھے۔اب انہیں بتایا جارہاہے کہ اب یہ امامت کا منصب تم سے لے کر امت محمدیہ کو دیا جارہاہے کیوں کہ اس امامت کے مستحق صرف وہ لوگ ہیں جو حضرت ابراہیمؑ کے طریقے پر چلیں،اب تم نے ان کا طریقہ چھوڑ دیا ہے اس وجہ سے اب تم اس منصب کے لائق نہیں رہے۔
ہم امت مسلمہ کو دنیا کی امامت کا منصب عطا کیا گیا ہے جیسا کہ آگے تفصیل سے آئے گا،یہ منصب ہمارے پاس قیامت تک ہے،جب تک ہم نے اس منصب کی حفاظت کی،اس کا حق ادا کیا تو اللہ نے ہمیں دنیا میں عزت عطا فرمائی ہمیں حکومت عطا کی گئی اور جب سے ہم نے حضرت ابرہیم کے طریقے کو چھوڑا ہے،سنت نبوی سے منہ موڑا ہے تب سے ہم ذلیل و رسوا ہورہے ہیں،آج دنیا میں تعداد کے اعتبار سے ہم دوسرے نمبر پر ہیں لیکن پوری دنیا میں ہم پٹ رہے ہیں،ہم اپنی عزت وناموس کو کھو دیا ہے لہذا ضروری ہے کہ ہم اسلام پر عمل پیرا ہوں اور سنت نبوی کو گلے لگائیں تاکہ ہم اپنا کھوئی ہوئی عزت واپس لا سکیں۔

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے