Home / بین الاقوامی / کرونا وائرس کا عذاب اور میڈیا کا کردار*

کرونا وائرس کا عذاب اور میڈیا کا کردار*

***
ازقلم :-
**سفیراللہ نادِم**
🌺🌺🌺🌺🌺
دنیا میں شیطانی کاموں کی کثرت و بہتات پر خالق کائنات کی طرف سے عذاب کا نازل ہونا آسمانی کتابوں میں آیا ہے —
سابقہ کتابوں کی طرح قرآن مجید بھی بستیوں ، قوموں اور تہذیبوں پر عذاب کا تذکرہ کرتا ہے – پروردگار عالم کیطرف سے انسان کی عمومی نافرمانیوں پر ہلکے عذابوں کے بعد سخت عذاب آنے کا تذکرہ ہے —
ولنذیقنھم من العذاب الادنی دون العذاب الاکبر لعلھم یرجعون —
،،اور ہم ان کو بڑے عذاب کے سوا عذاب دنیا کا بھی مزہ چکائیں گے شاید وہ ہماری طرف لوٹ آئیں ،،
اس آیت کریمہ میں اس تادیبی عذاب کی حکمت انسانوں کے اندر عبرت پذیری کے سوئے ہوئے جذبے کو جگانا اور ابھارنا بیان ہوئی ہے –
ماضی کی تاریخ گواہ ہے کہ دنیا کے تمام مذاہب جو خدا کا کچھ بھی تصور رکھتے ہیں وہ ہمیشہ ان بلاؤں ، مصیبتوں اور عذابوں کو خدا کی ہی طرف منسوب کرتے تھے اور اس کی ناراضگی کی علامت سمجھتے تھے – براہو حالیہ عالمی مغربی شیطانی لادین تہذیب کا جو دین دشمن خدا بیزار اور مادر پدر آزاد تہذیب ہونے پر فخر کرتی ہے اور اس سے برا ہو ان نام کے مسلمان کا جو ذرائع ابلاغ (میڈیا) کے ذریعے مغربی تہذیب کی تبلیغ کے ساتھ بیماریوں اور عذاب کو اپنی بری کمائی کا ذریعہ بناتے ہیں —
ماضی میں بھی آسمانی بلاؤں اور عذاب کے آنے پر بالعموم لوگ عبادت گاہوں کا رخ کیا کرتے تھے —
اور ایسے ہی وقت میں محبوب پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کی فرامین سے ہمیں صدقہ و خیرات کا حکم ملتا ہے اور یقینا صدقہ کائنات کے مالک کی نافرمانی پر اس کے انسانوں پر غضب کو کم کرتا ہے —
تو کرونا وائرس کی اس مہلک بیماری میں ہمیں رجوع الی اللہ کی طرف ضرورت ہے –
اس کے ضمن میں حکومتی مدافعتی اور پرہیز اختیار کرنے کے جملہ اقدامات سے مکمل تعاون ہم سب کا اہم فریضہ ہے —
لیکن یاد رہے کہ گناہوں سے توبہ کرنا اللہ تعالی کی نافرمانیوں سے بچنا حرام اشیاء سے پرہیز کرنا سماجی میل جول کم کرنا ایک اچھے مسلمان کردار ہوگا —
درحقیقت کرونا وائرس کا پھیلاو اتنا نہیں جتنا میڈیا نے پہلا دیا ہے اور عوام کے ذہن میں خوف و ہراس پیدا کر دیا ہے –
بہرحال
اس سے بچاؤ کیلئے تمام ممکنہ اسباب اختیار کیے جائیں – کیونکہ فرض نماز سے پہلے گھر سے وضو کرنا سنت اور نمازوں سے قبل کی سنتیں گھر میں ادا کرنا سنت رسول صلی اللہ علیہ وسلم اور طریقہ صحابہؓ ہے اور فرض نماز مسجد میں ادا کر کے گھروں کو لوٹ جانا اور بقیہ نماز گھروں میں ادا کرنا بھی صحابہ کرامؓ کا عمل تھا —
اسی میں برکت ہے تاہم اس سب سے اوپر زندگی موت کا فیصلہ کرونا وائرس میں نہیں کرنا بلکہ اللہ نے ہی کرنا ہے اور موت کسی بھی وقت آسکتی ہے بغیر اسباب و علامات کے ظہور کے –
تو ان تمام تر حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے اس بیماری کے علاج کے ساتھ اللہ تعالی پر بھروسہ کریں – اس بات کا یقین پیدا کریں اور دل میں بٹھائیں کہ موت کب ، کہاں اور کیسے آنی ہے یہ میرے مالک کے ہاتھ میں ہے اور حتمی ہے ایک مقررہ وقت پر اہی جانی ہے —
لہذا اللہ کی ناراضگی سے بچیں آخرت کا احساس کرکے توبہ کریں اسی میں بھلائی ہے

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے