Home / کالم / ذاتی نظریہ و رائے “*

ذاتی نظریہ و رائے “*

*”
تحریر
عمیرحنفی
ہمارے معاشرے کا ایک لازمی طبقہ نوجوان ہیں معاشرے میں روز اول سے ان کا اہم کردار رہا ہے بنیادی طور پر معاشرے میں بگاڑ تربیت کا نہ ہونا یا صحبت کا معیاری نہ ہونے کی وجہ سے ہے ایسے میں نوجوانوں کی زبان اور قلم و بیان بتا رہے ہوتے ہیں وہ کس نظریہ و سوچ کے حامل ہیں؟ کس کے کتنے پیروکار ہیں؟ وہ کس حد تک اخلاق و مروت کا پاس رکھتے ہیں؟ والدین سے دست بستہ گزارش ہے اپنی اولاد اور چھوٹے بچوں کے سامنے پاکستانی سیاست کی بحث بالکل نہ کریں مانتا ہوں کہ سیاست اسلام کا حصہ وہ معاشرے میں متعارف کروائی جائے لیکن جو ہمارے ہاں سیاست و ذہنی غلامی اور بند نظریہ ہے اس کے دو سنگین نقصان ہیں نمبر ایک بچے کو جیسا ذہن اب ملے گا وہ ویسا ہی منشور بنا لے گا آپ اس کو سیاسی غلام بنانا چاہو گے… یا جو نظریہ دو گے وہ قبول کرے گا دوسری بات وہ بچپن سے ہی تلخ مزاج بداخلاق و رویہ اپنی طبیعت کا حصہ بنا لےگا اس لیے فقط انہیں تعلیم و مستقبل کی راہ دکھائیں انہیں اسلاف کی زندگیوں سے روشناس کروائیں انہیں ایک لیڈر اور قوم کا ایک مسیحا بننے کی ترغیب دیں….خلاصہ یہ کہ ان کو معاشرے کا ایک اچھا فرد بننے کی ترغیب دیں

**

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے