Home / کالم / قبرستانوں کی فرنچائز !

قبرستانوں کی فرنچائز !

تحریر/
نوید احمد سلہری
📕📕📕📕📕
۔ارے یہ کیا ؟ ۔۔۔۔۔کیا ایسا بھی ہو سکتا ہے ؟۔۔۔۔۔۔۔۔بھلا ایسا کون کرے کرے گا؟۔۔۔۔۔۔۔ایسا تو افریکہ کے قدیم جنگلی قبائل سین اور نما میں بھی نہیں سنا؟۔۔۔۔۔۔ایسی فرسودہ ۔۔۔۔بہودہ ۔۔۔۔۔روایات کو آخر جنم کس نے دیا ۔۔۔۔۔کیا اب بھی اکیسویں صدی میں ایسے غیر انسانی قوانین کا کوئی والی وارث ہو گا ۔۔۔۔۔۔اہل مغرب والے بھی قبرستانوں کی خریدو فرخت پر ہونے والی نیلامی پر تھوکنے پر مجبور ہو گئے ہیں ۔۔۔یہ کون لوگ ہیں جو قبرستانوں کی فرنچائز کے بورڈ لگائے ۔۔دن دھاڑے ۔۔۔لوٹ مار کا بازار گرم کیے ہوئے ہیں ۔۔۔۔

تو جناب سنیں ۔۔۔۔۔اکیسویں صدی میں اس گھٹیا اور بے نور روایات کا نہ صرف دھندہ عروج پر ہے بلکے پیروکاروں کی گردنوں پر جماعت کے مالکان کے بھاری پاؤں بھی ہر وقت موجود رہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔جناب یہ سچ ہے اور سو فی صد سچ ہے اس قبیح عمل کی جڑیں مرزا غلام احمد کی جماعت ۔۔۔۔احمدیت ۔۔۔۔۔یعنی المعروف مرزائی یا قادیانی میں دن دگنی رات چوگنی ترقی کر رہیں ہیں ۔۔۔۔۔۔ان قبرستانوں کا نیٹ ورک قادیان (انڈیا) اور چناب نگر (پاکستان ) سے میکڈونلڈ اور ہونڈا بائک کی طرح دنیا میں جہاں بھی قادیانی بستے ہیں وہاں پھیل چکا ہے ۔۔۔۔
جس طرح دکان میں جوتوں کی کوائیلٹی اور بناؤٹ کے پیش نظر دام مختلف ہوتے ہیں اسی طرح ان قبرستانوں میں بھی ۔۔۔۔پیسہ پھینک تماشا دیکھ ۔۔۔۔کی بنیادوں پر اعلی اورادنی قبرستان کی تقسیم کی جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔یعنی اگر آپ اے کوئیلٹی کا مدفن چاہتے یں تو آپ کو ۔۔۔۔۔مرنے سے پہلے ایک وصیت کرنی ہو گی ۔۔۔۔کہ آپ اپنی جائیداد کا 10 فی صد جماعت احمدیہ کے نام کریں گے ۔۔۔۔اور بات صرف برگر تک ہی نہیں بلکے کیچ اپ کے طور پر ہر ماہ 10 فی صد بھی جماعت کی زنبیل میں ڈالنا ہو گا ۔۔۔۔وگرنا آُ پ کو نام نہاد بہشتی مقبرہ ۔۔۔۔یا اس کی ذیلی فرنچائزڈ قبرستان میں دفن نہیں کیا جائے گا ۔۔۔منڈی میں آواز لگانے والے ہاریوں سے زیادہ ۔۔۔قادیانیوں کی آوزیں مختصر وقت میں زیادہ کما رہی ہیں ۔۔۔۔۔قبرلے ۔۔۔قبر لے لو ۔۔۔۔۔اعلی قبر لے لو ۔۔۔۔نہ پھٹے نہ پانی پڑے ۔۔۔۔دھوپ میں ٹھنڈی ۔۔۔۔دھند میں گرم ۔۔۔۔
شائد دوستو ۔۔۔۔آپ میری باتوں کو مذاق سمجھ رہے ہیں ۔۔۔۔جناب ایسا ہر گز نہیں ابھی گوگل پر جائیں ۔۔۔۔بہشتی مقبرہ لکھیں ۔۔۔۔آپ کو ان کا مینیو آسانی سے مل سکتا ہے ۔۔۔۔اور اگر پھر بھی کوئی شک گزرے تو ان کی کسی فرنچائز سے باقاعدہ معلومات بھی مل سکتی ہیں ۔۔۔۔۔۔دام بنائے کام ۔۔۔۔۔۔جماعت احمدیہ اک ایسی انشورنس کمپنی ہے جس میں ریٹرن کوئی نہیں ۔۔۔۔ پیسے دیتے جاؤ اور اندھے بنتے جاؤ ۔۔۔۔اگر کہا جائے قرآن سے اس کی دلیل پیش کرو ۔۔۔۔۔تو بندر کی طرح کبھی ادھر اور کبھی ادھر پھدکنا شروع کر دیتے ہیں۔۔۔۔۔ان کو پتہ ہے کہ یہ بھتہ نما چندہ قرآن میں تو دور کی بات کسی جاہل جنگلی قبیلے کی بھی روایت میں شامل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔جواب میں ڈھیٹ،بے شرم ۔۔۔۔انتہائی ڈھٹائی سے کہیں گے جب ہمیں مسئلہ نہیں تو آپ کو کیا مسئلہ ہے ،۔۔۔

ارے عقل کے اندھو ۔۔۔۔یہی بات اگر شرابی کہے ۔۔۔۔۔زانی کہے ۔۔۔۔۔ظالم کہے ۔۔۔۔کہ ہم مطمئن ہیں تو آپ کو کیا گلہ ۔۔۔۔۔تو بولیں خدا کا نظام تو دور کی بات ۔۔۔اہل مغرب کا نظام نہیں چل سکتا ۔۔۔۔اس فرسودہ ۔۔۔گری ہوئی ۔۔۔منطق دینے والوں کو آپ کیا کہیں گے ۔۔۔۔۔قرآن کتاب دلیل ہے ۔۔۔اللہ بھی نہیں چاہتا کے اسے فقط اس لیے مان لیا جائے کہ وہ تمہیں وراثت میں ملا ہے ۔۔۔۔بلکے اللہ تبارک و تعالی ۔۔۔۔خود کو تسلیم کروانے کے لیے بھی واضح طور پر قرآن پاک میں ارشاد فرماتا ہے ۔۔۔۔

پھر جب لاجواب ہونے کی ہزیمت سے دوچار ہونے کا احساس ان کے اندر ابھی جنم ہی لینے والا ہوتا ہے تو ۔۔۔۔جھٹ سے کہنے لگتے ہیں ۔۔۔۔دیکھیں جی وہ ابوبکر رضی اللہ تعالی نے بھی تو گھر کا سارا سامان لا کر حضور ﷺ کی خدمت میں لا کر پیش کر دیا تھا ۔۔۔۔مال کی قربانی میں حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالی عنہ نے بھی تو آدھا مال نچھاور کر دیا تھا ۔۔۔۔۔سادہ لوح مسلمان ان کی اس تلبیس کے جال میں پھنس کر تھوڑے محتاط ہو جاتے ہیں ۔۔۔۔۔بات تو ٹھیک کر رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن جناب یہ ٹھیک تو دور کی بات موضوع سے ہی تعلق نہیں رکھتی ۔۔۔۔۔قربانی وہ ہے ۔۔۔۔جو آپ کی مرضی کے تابع ہو آپ فیصلہ کریں ۔۔۔۔نہ کوئی قانون نہ کسی مذہبی شریعی سزا کا خوف آپ کے اوپر منڈلا رہا ہو ۔۔۔۔۔ییہاں تو احمدیت یعنی قادیانیت میں چندے کی تلوار نہ صڑف نادھندا لوگوں پر چلتی ہے بلکے جماعت کے اخراج کے بعد بھی ہر لمحے ان کا تعاقب کرتی رہتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔اب آپ قادیانیوں سوچنا ہے ۔۔تحقیق آپ کے ذمے ہے ۔۔۔۔۔
سوال آپ کو اٹھا نے ہیں ۔۔۔۔اس سے پہلے کہ زندگی کی حفاظت میں لگی موت اپنا فیصلہ سنا دے ۔۔۔۔۔ہمیں اللہ کی حفظ و اماں اور محمد عربی ﷺ کے در اقدس پر صاف دل اور پریقین حاضر ہونا ہے
فقیرانہ آئے صدا کر چلے ۔۔۔۔۔۔میاں خوش رہو ہم دعا کر چلے

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے