Home / کالم / شریک حیات کیسا ہو؟

شریک حیات کیسا ہو؟

انتخاب
امداد اللہ طیب

شریک حیات کو اتنا پیار اوراعتماد دیجئے کہ بیوی اپنا ہر رشتہ آپ میں دیکھے۔ یہ مرد کی کمزوری نہیں مضبوطی کی نشانی ہے کہ وہ خود سے منسلک ہر رشتے کو اعتماد اور عزت و توقیر میں ملبوس کرے۔ رشتوں کے بیچ تصادم عورت کی نہیں مرد کی کمزوری ہے۔
سارا رومانس،ساری خوبصورتی اس میں ہے کہ مرد صبح گھر سے نکلے تو بیوی دروازے تک چھوڑنے جائے اور جلدی سے آیت الکرسی پڑھ کر اپنے شریک حیات پر دم کر دے۔ شوہر ایک الوداعی نشانِ محبت پیشانی پر ثبت کردے۔ کوئی نرم سامہکتا ہوا جملہ کہہ دے یا نکلتے نکلتے گھوم کر ہلکا سا ہاتھ ہی ہلا دے تو بیوی سارا دن اس قید سے نکل نہیں پاتی۔
جی ہاں! رومانس اس میں نہیں کہ مرد اکڑے ماش کے مزاج کے ساتھ گھر میں داخل ہو۔ لرزتی کانپتی ہراساں بیوی، بیوقوفی سے پلکیں جھپکاتی، پلّوگراتی، خود لڑکھڑاتی اس کے جوتے چپل، چائے پانی حاضر کرے۔ رومانس تو اس میں ہے کہ ہلکی سی تھکی مسکراہٹ آپ کے لبوں پر پاتے ہی بیوی بڑھ کر آپ کا سامان آپ کے ہاتھ سے لے لے۔ مرد اپنے تبدیل شدہ جوتے دو انگلیوں کے آنکڑے میں پکڑ کر شو ریک پر رکھ دے۔ہاتھ منہ دھو لے۔ اتنے میں نکھری ستھری، بااعتماد خوشبو میں بسی بسائی بیوی باورچی خانے میں چائے تیار کرلے اور ہلکی پھلکی گفتگو کے دوران رات کا مینیو ڈسکس کر لیا جائے۔
کہیں سفر میں ٹھنڈ سے اکڑتی ہلکے سویٹر میں ملبوس بیوی کو اپنا کوٹ یا جیکٹ اوڑھا دے۔کہیں حضرمیں کمبل سیدھا کر دے۔ سفر میں اشارے پر رکنا پڑ جائے تو پھوں پھاں اور تن فن کرنے کی بجائے دو گجرے لے کر بیوی کو پہنا دے اور پھر دیکھے کے کیسے بیوی کی محبت سے چورنگاہ گاڑی اور اردگرد کی فضا کو مشکبار کردے گی۔ اس وقت کتنے گداز پل سرمایہ بن جاتے ہیں کہ محبت تو نرمی میں، نرم لہجوں میں نمو پاتی ہے۔ آنکھوں میں بہار بن کے لہراتی ہے۔ مرد کی گھبیر آواز اور دلکش لب و لہجہ اس کی نرمی سے ہے نہ کہ چیخ و پکار میں۔کرخت لہجہ اور رعونت چہرے کے نقوش بگاڑ دیتی ہے۔

کتنا پروقار لگتا ہے وہ مرد جو اپنی بیوی کے لئے گاڑی کا دروازہ کھولتا ہے۔ تحفظ اور فخر کا احساس عورت کو محبت سے بھر دیتا ہے۔ دیکھنے والوں کی نگاہ بھی عقیدت و احترام سے جھک جاتی ہے۔ آپ اپنی عزت کو عزت دیجیے دوسرے بھی عزت دینے پر مجبور ہوں گے۔
پرام دھکیلتا مرد برابر میں سہج سہج شوہر کی ڈھال میں چلتی بیوی، یہ ہے رومانس۔
رومانس کو ایسے حسین پلوں میں تلاش کیجئے اور قید کرکے سرمایہ زندگی بنا لیجئے۔ یہ زندگی ہے اونچ نیچ ہوتی رہتی ہے، اس سے خوشیاں کشید کرنے کا ہنر سیکھئیے۔

خواتین کا اسلام سے زارا مظہر کے مضمون۔۔۔۔شریک حیات کیسا ہو؟
امداداللہ طیب کا انتخاب

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

One comment

  1. Avatar

    I very like this blog. Everything is cleared.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے