Home / پاکستان / احتجاجی و تعزیتی اجلاس جامع مسجد علی ظفروال

احتجاجی و تعزیتی اجلاس جامع مسجد علی ظفروال

پریس ریلیز
رپورٹنگ/ امداداللہ طیب

خلیفہ راشد،اشجع امت،امیر المومنین سیدنا عمر بن عبدالعزیز ان کی اہلیہ کی قبر کی توہین پر انٹرنیشنل ختم نبوت موومنٹ پاکستان اور دیگر قائدین کا شدید اظہار مذمت

یہ وحشیانہ اور ظالمانہ واقعہ درندگی کی ایسی مثال ہے کہ جس کی نظیر زمانے میں نہیں ملتی۔
مسلم حکمران،انسانی حقوق کے عالمی ادارے_ او آئی سی، اور اقوام متحدہ اس کا فوری نوٹس لے کر ملزمان کو قرار واقعی سزا دلوائیں۔

انٹرنیشنل ختم نبوت موومنٹ پاکستان کے نائب امیر حضرت مولانا افتخار اللہ شاکر صاحب،حضرت مولانا مفتی شکیل احمد نقشبندی صاحب،حضرت مولانا مفتی عبد الوحید صاحب،جمعیت علماء اسلام ظفروال کے امیر محترم جناب قاری ریاض احمد صاحب،ہردلعزیز شخصیت محترم جناب خواجہ مرتضی احمد صاحب نمائندہ روزنامہ اسلام ظفروال ودیگر علماء کا مشترکہ بیان۔

ملک شام ادلب میں واقع امیرالمومنین عمر بن عبدالعزیز اور ان کی بیوی فاطمہ بنت عبدالملک کی قبور کی بے حرمتی پر انٹرنیشنل ختم نبوت موومنٹ پاکستان کے نائب امیر حضرت مولانا افتخار اللہ شاکر صاحب،حضرت مولانا مفتی شکیل احمد نقشبندی صاحب،محترم جناب قاری ریاض احمد صاحب،محترم جناب خواجہ مرتضی احمد صاحب
مفتی عبدالوحید عثمانی صاحب،مولانا ڈاکٹر زاہد محمود نعمانی صاحب،مفتی امتیاز صاحب،مولانا غلام مصطفی امدادی صاحب،مولانا احسان اللہ صاحب،مولانا محمد عظیم فاروقی صاحب،مولانا مظہر اقبال،مولانا عثمان سائیں،مولانا عبدالرؤف
ودیگر علماء نے شدید غم و غصے اور دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ خلیفہ عادل کے مزار کی بے حرمتی سے عالم اسلام میں شدید غم و غصہ، بے چینی اور اضطراب پایا جارہا ہے۔ اسدی حکومت کے شر پسندوں کا یہ عمل امت مسلمہ کے لئے ناقابل برداشت ہے۔ انبیائے کرام،صحابہ کرام،تابعین،امت کی برگزیدہ ہستیاں ہیں۔ ان شخصیات کی ادنیٰ سی بھی توہین مسلمانان عالم کو برداشت نہیں ہے۔ علمائے کرام نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا کہ شامی صدر اور اس کے حامی آئے روز اہلسنت عوام اور علماء کو تشدد کا نشانہ بناتے رہتے ہیں۔ ان کا قتل عام اور خونریزی آئے روز کا معمول ہے۔ جو کہ پوری دنیا کے سامنے ہے۔ اس واقعے کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ امت مسلمہ کو جاگنا ہو گا اور عوام الناس میں ان شخصیات کی سیرت کو عام کرنا ہوگا۔ تاکہ عوام میں اہلسنت اور مقدس شخصیات کی توہین،مزارات کا تحفظ ہوسکے۔
علمائے کرام نے مطالبہ کیا کہ ریاست مدینہ کے دعویدار حکمران اور ان کے وزراء،انسانی حقوق کے عالمی ادارے، اور تنظیمیں شامی صدر کی سرپرستی میں ہونے والی درندگی اور سفاکی کا نوٹس لیں۔مجرموں کو سزا دلوانے میں اپنا کردار ادا کریں۔
اجلاس کے آخر میں اس بات کا بھی مطالبہ کیا گیا کہ ملک پاکستان میں قادیانیوں کی بڑھتی سرگرمیوں کا ادارے نوٹس لیں۔ قادیانی چینلز کی بندش کی جائے۔ قادیانی ملک اور وطن کے غدار ہیں۔
علمائے کرام نے جید علمائے کرام کی رحلت پر افسوس کا اظہار بھی کیا اور حضرت مولانا ڈاکٹر علامہ خالد محمود صاحب،حضرت مولانا مفتی سعید احمد پالنپوری صاحب، حضرت مولانا محمد یحییٰ خان محسن صاحب،حضرت مولانا عبید الرحمن ضیاء صاحب،حضرت مولانا یحی مارتھ کی دینی،ملی،ملکی، سیاسی خدمات کو سراہا،اور خراج تحسین پیش کیا۔اور ان کی بلندی درجات کے لیے دعائے مغفرت بھی کی۔

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

One comment

  1. Avatar

    I very like this blog. Everything is cleared.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے