Home / کالم / فلک بہت معصوم..

فلک بہت معصوم..

کتاب: 15 پرسرار کہانیاں
مصنفہ: فلک زاہد
تبصرہ نگار:
زینب ملک ندیم

فلک زاہد سے جان پہچان کا سلسلہ اپواء ارگنائزیشن سے ہوا۔فلک بہت معصوم…پرخلوص سادہ دل لڑکی ہے..فلک سے بات چیت ہمیشہ خوشگوار رہی اپنے بڑوں کا کیسے خیال رکھا جاتا ہے انکا احترام کیسے کیا جاتا ہے یہ تو کوئی فلک سے سیکھے.فلک سے دو بار ملاقات بےحد خوشگوار رہی دوسری ملاقات میں اتنی پیاری بچی نے مجھے اپنی کتاب “پندرہ پرسرار کہانیاں” گفٹ کی.پرسرار کہانیاں پڑھنا میرے لیئے ہمیشہ ایک چیلنج رہا ہے یہ کہانیاں انسان جب تک خود پر حاوی نا کرلے تب تک دل و جاں سے انہیں محسوس کرنا مشکل ہے.کتاب کا ٹائٹل کیا کمال ہے خونی دحشت زدہ….
پہلی کہانی “پارسل” کی جانب جب آپ بڑھتے ہیں
تو قصہ ایک گڑیا سے شروع ہوتا ہے کیون کو ایک پرسرار گڑیا کا ملنا پہلے پہل کہانی کے بہاؤ کیساتھ بہتے بہتے ایسا معلوم ہوتا ہے کے شاید یہ گڑیا ایلا ہے جو مرنے کے باوجود کیون کے ساتھ رہنا چاہتی ہے کہانی پرسرار طور پر کیون,گریس اور فریڈی کا کردار لیئے آگے بڑھتی ہے کے اچانک سے گڑیا کی حرکات و سکنات چوکنا کرنے میں ماہر کردار ادا کرنے لگتی ہیں خوف پنجے گاڑتے ہوئے کہانی کو آگے بڑھاتا ہے جہاں ایلا کی وفات پر کیون قاری سے ہمدردی سمیٹنے میں ابھی کامیاب ہی ہوتا ہے وہیں اسکی شرافت کا پتلا اپریل کے ساتھ کی گئی زیادتی سے پاش پاش ہوکر رہ جاتا ہے کیون نے اپریل کے ساتھ جان چھڑوانے کے لیئے جو حل ڈھونڈا وہ نہایت گھٹیا تھا اسکو معاف کرنا ناممکن تھا اپریل نے کیون کا گڑیا میں بس کر ساتھ چاہا کیون کے لیئے یہ سزا ہی کافی تھی .
دوسری کہانی” پاگل عورت”
یہ کہانی پچھتاوا ہے اللہ اللہ کیا کر ڈالا اسکے انجام نے مجھے ایسا محسوس کروایا جیسے دنیا کی بےحد بڑی غلطی بس ولسن سے ہی سرزد ہوگئی ہو…ولسن کو تھوڑی عقل کرنی چاہئیے تھی مجھے آخر تک لگا کے شاید اس نے ٹھیک کیا مگر ہائے بیکا اففففف رونگٹے کھڑے ہوگئے لکھاری نے باکمال لکھ دیا۔
تیسری کہانی “بھیانک سبق”
یہ کہانی سچ میں ایک سبق کو ساتھ لیئے انسان کو یہ باور کرواتا ہے کے بےوفائی سب سے بدترین گناہ۔ہے انسان زندگی میں کتنا بھی اکیلا ہو علیحدگی بےوفائی سے بہتر رہتی ہے کہانی ایک بہترین سبق ہے ان لوگوں کے لیئے جو اس انجام سے کچھ سیکھنا چاہتے ہیں.
چوتھی کہانی “جھوٹ”
اس کہانی نے مجھے پاگل عورت والی کہانی جتنا دکھ دیا دونوں کہانیوں میں معصوم لڑکیوں کو انکے ناکردہ جرم کی سزا دی گئی.حقیقت ہے کوئی بھی فیصلہ جلدبازی میں نہیں کرنا چاہئیے..ان کہانیوں نے بہت رلایا…من چاہا فورا سے انکو بچالوں کاش بچ جاتے…..ہر۔جرم اپنی جگہ لیکن ہر فریق یہ پورا حق رکھتا ہے کے اسکی بات سنی جائے سمجھی جائے ان دو کہانیوں پر لکھاری سے گلہ بنتا ہے 🙁
پانچھویں کہانی “سردیوں کی رات”
یہ کہانی ہے پانچ بھائیوں کی انکے پیار
کی انکی نوک جھوک کی.لڑائی بھی کریں تو کمال لگیں اتفاق سے رہیں تو بندہ صدقے واری چلاجائے..سچ بتاؤں تو مجھے فرینک کی مصنوعی کہانی بہت دل چیرتی ہوئی محسوس ہوئی مجھے آگے بھی سننی تھی تالیوں کا یہ سلسلہ بہت انوکھا تھا ایک نیا آئیڈیا فلک کیسے سوچتی تھی ماشاءاللہ سے لکھاری کی سوچ اور ذہانت پر عش عش کرنے کا من چاہتا ہے.. کرسٹوفر بہت چالاک معلوم ہوا(ہاہاہاہاہا) میں تو سوچتی رہ گئی کہیں فرینک اسکو شوٹ ہی نا کردے توبہ ایسا مذاق بچارے پانچھوں بھائیوں کا دماغ گھما کر رکھ دیا.رابرٹ کی چھٹی حس نے تو دل موہ لیا.جیسا اس نے کہا ویسا ہی ہوا بہترین کہانی۔
چھٹی کہانی “دھڑکتا دل”
کیا کوئی عورت برتن دھوتے ہوئے بھی اتنی خوش ہوسکتی ہے؟
یہ جملہ کہانی کو جیسے چار چاند لگانے میں کافی تھا.یہ کہانی مجھے تھوڑا الجھاؤ کا شکار لگی ہاں بھائی پرسرار ہے تو پرسرار ہی لگے گی نا 😉
جان نے بےحد غلط کیا عجیب بندہ ہے حد ہے یعنی بغیر جواز کے بناسوچے سمجھے کسی معصوم پر ایسا الزام لگانا اللہ بچائے ایسے جرم سے اور اس سے بڑا گناہ بیلا۔کو مار دینا وہ بھی اتنی اذیت سے توبہ توبہ انسان کو اپنے منفی خیالات کو خود پر اتنا بھی حاوی نہیں کرلینا چاہئیے کے اس سے دوسری ذات کو اتنا بھیانک انجام دیا جائے 🙁
ساتویں کہانی” عاشق روح”
میرا سچ میں دل کیا کے یہ کہانی بہت طویل ہوتی جائے اس کہانی سے اندازہ ہوتا ہے کے لکھاری رومینس…عشق محبت کو بہت کمال۔لکھ سکتی ہے شرلی کا کردار بہت مضبوط اور
حوصلے سے بھرپور رہا جیک نے جو کیا اسکو اسکا کوئی حق نا تھا کاش وہ ایسا نا کرتا کہانی ایک جن کی انسان سے والہانہ محبت کی داستان ہے جو اپنے پیار کو پانے کے لیئے اتنی حد تک چلا گیا کے ہر اس انسان کو مار دیا جو اسکی محبت کے قریب آتا جیمز کا مرنا فرینک کے ٹکڑے توبہ
شرلی نے اس قصے کو ختم کرنے کے لیئے اپنی جان کی جو قربانی دی وہ ناقابل فراموش ہے کاش ایسا نا ہوتا لکھاری نے کہانی کو بھرپور طریقے سے آگے بڑھاتے ہوئے ایسا انجام کیا اشک رواں ہوجائیں
آٹھویں کہانی “دسمبر”
کہانی طویل ہونے کے ساتھ ساتھ ہر منظر کو باریک بینی سے یوں آگے بیان کرتی ہے کے انسان کی نظروں کے آگے ہر کردار چلتا ہے ہنستا ہے بولتا ہے جیتا ہے خوف سے کانپتا ہے۔
روبی ایک لکھاری جسے خاص نمبر میں کہانی لکھنے کے لیئے ایک صبح ایڈیٹر کی کال آتی ہے روبی کی خوشی کی انتہا نہیں رہتی اور وہ اس مقصد کو پورا کرنے لیئے دلمجعی سے اٹھ کھڑی ہوتی ہے صارم اور روبی کا پیار دل کو بہت سکون بخشتا ہے۔۔۔۔کامران اففففففف کامران سے بہترین اداکار کون ہوسکتا۔ہے صارم کو تو بیسٹ اسکرپٹ۔رائٹر ہونا چاہئیے تھا کہانی کو یوں آگے بڑھایا کے قاری حیران و پریشان سا کھڑا یہ اس سب کو حقیقت میں ایک شیطانی چکر سمجھنے لگے مجھے تو کہانی کے ساتھ چلتے چلتے یہی محسوس ہوا جیسے روبی پھنس چکی ہے جو بھی تھا ایسا مذاق کبھی نہیں کرنا چاہئیے تھا
کہانی قاری کو یہ سبق دیتی ہے کے جتنا سے جتنا مشکل وقت آپکے آگے آن کھڑا ہو انسان کو آخری سانس تک لڑنا چاہئیے۔
روبی کے لیئے کامران سے بہتر سالگرہ کا اور کیا تحفہ ہوسکتا تھا ہائے ❤
نویں کہانی “گڑیا”
دو معمر جوڑے کی تنہا زندگی کی داستاں
مسز مائیکل کا گڑیوں سے پیار انکی جان لے گیا.
مارگریتا انکی ایک نوکرانی جس نے اپنی ہتک نا برداشت کرتے ہوئے شفیق جوڑے سے وہ بدلہ لیا جس نے دل کو توڑ دیا 🙁
تلخ الفاظ دل توڑ دیتے ہیں مانتی ہوں مگر ایسا بدلہ لیا بےحد درد ناک ہے
سچ بتاؤں تو گڑیا نے بےحد کمال۔کیا اسکے ڈائیلاگز کمال۔تھے “اس نے میری ماما۔کو مارا تھا اور میں نے اسکو مار دیا”
واہ واہ
دسویں کہانی “خبیث روح”
توبہ فلک ایسی گھٹیا روح بھی ہوتی ہے(ہاہاہاہا)
بےچارہ مائیکل۔چچ چچ اس پر تو افسوس ہی کیا جاسکتا ہے نینسی اپنے حسن کے جال میں پھنسا کر مائیکل کے ساتھ جو کیا مائیکل پہلے تو شرمندہ تھا لیکن اس دوشیزہ کا روح نکل جانا ہائے مائیکل۔تو پوری زندگی کا روگ لے بیٹھا ۔
گیارویں کہانی ” ھوٹل کی رات”
یہ کہانی ہے چودہ دوستوں اور چودہ روحوں کی
چودہ لڑکیاں جو نیویارک سے لاس اینجلس کے سفر کے دوران ایک ہوٹل میں ٹھہریں ایک ہوٹل موت کا کھیل کھیل کر انسانوں کی جان لے جانے والا.کہیں دھوکہ دہی سے جان چھین کر اور کہیں جان بخشی کردینے والا..جیک ہوپس اور اسکے دوستوں کے ساتھ جو ہوا انہیں اسکا بدلہ لوگوں کیساتھ خون کی ہولی کھیل کر نہیں لینا چاہئیے تھا ان چودہ دوستوں کے ساتھ کھیل کھیلا گیا جان لی گئی اور آخر میں بچ جانے والوں کے ساتھ بڑی گیم۔کھیلی گئی کاش سڈنی بھی بچ جاتی اور ان جنوں کا کام۔بھی تمام ہوتا.لکھاری نے کھیلوں کی منظر کشی اتنی مہارت سے کی ہے کے لکھاری خود کو اس مقام پر محسوس کرنے لگے.
بارویں کہانی “موت کا کھیل”
لکھاری نے یہ کہانی لکھ کر یہ بات بتائی کے انسان زندگی میں کبھی بھی کسی سے بھی دھوکہ کھا سکتا ہے اسے اپنی ذات پر اتنا بھروسہ نہیں رکھنا چاہئیے.یہ کہانی ہے نوجوان لڑکیوں کی پرسرار موت کی قاتل انکے پورے جسم۔سے خون چوس کر انہیں ہوٹل۔کے کمرے میں چھوڑ جاتا تھا۔ کہانی کے کردار جوزف کے ساتھ قاتل کو تلاشتے تلاشتے گویا دل کی دھڑکنیں تیزی سے چلتی رہیں انگنت سوالات سر اٹھانے لگے قاتل کون ہے کیسا ہے ایسے قتل کیسے کرلیتا ہے ۔آفیسر مریلن کا بھی اس حادثے کا شکار ہونا رلادینے والا تھا
پھر مین کردار کا ایک لڑکی کے عشق میں مبتلا ہوکر دھوکہ کھانا وہ لڑکی قاتل کی بہن جوزف کی زندگی کی۔کایہ پلٹ دیتی ہے ۔سلینا بھی اپنے بھائی کے نقش قدم پر چلتے جوزف کا۔خون چوس لینا۔چاہتی تھی۔قسمت نے جوزف کو بچا لیا
ٹام۔کے کردار نے یہ۔باور کروایا کے دوستی کتنا خوبصورت ناطہ ہے ❤
تیرویں کہانی ” پولیس مین”
لیونارڈ کے ساتھ بیتی پرسرار کہانی جس نے اسکی زندگی کی سلیٹ پر ہمیشہ کے لیئے خوف کے نشاں نقش کردیئے.
لیونارڈ کا ایک عجیب انسان سے ٹکرانا پھر پولیس کا اگلے دن اسکے پڑوسی کے قتل پر تفتیش کرنا اور پھر چند دن بعد مینیجر کا کہنا کے کوئی پولیس نہیں آئی۔پھر لاش کا۔ملنا توبہ اس کہانی نے تو مجھے گھمادیا کیسا چکر چلا۔کیا ہوا انسان سوچتا ہی رہ جائے.
چودویں کہانی ” جل پری”
کیسی جل پریوں کی دیوانی لڑکی جسے ان سے ملنے کا بہت جنون تھا اور پھر ایک رات قسمت نے اسے یہ شرف بخشا اور اسے ان سے ملنے کا نادر و نایاب موقع ملا.یہ کہانی نہایت دلفریب تھی حسن کا پیکر❤
پندریویں کہانی “ہوٹل۔کیلی فورنیا”
یہ کہانی ہے ہوٹل کیلی فورنیا کی جس کا ماحول نہایت پرسرار ہے مارلن جو تجسس لیئے ان رازوں سے پردہ اٹھانا چاہتا تھا اس ہوٹل۔میں رہنے آیا اس نے غورو فکر کی اور راز سے پردہ اٹھ گیا جہاں اس راز نے مارلن کو ڈرایا وہیں ایک خط نے اس کے دل۔کو مطمئن کردیا یہ۔ہوٹل تھا دوسری دنیا کی مخلوقات سے بہترین تعلقات استوار کرنے کا ایک ذریعہ یہ کہانی پرسرار ہونے کے ساتھ ساتھ ہونٹوں پر ایک دلفریب مسکراہٹ بھی دے گئی۔
تمام کہانیاں پرسراریت میں اپنی مثال آپ تھیں۔کسی کہانی میں زرہ برابر بھی جھول موجود نہیں تھا۔کہانیاں ہاتھ پکڑتیں خوف وحشت کے گھنے جنگلوں سے گَزارتے ہوئے وجود میں کپکپی طاری کردیتیں…منظر نگاری اتنی لاجواب کے ہر سین فلم کی۔مانند آنکھوں کے آگے سے گھومنے لگتا.
ایک چھوٹی بچی کے قلم۔میں اتنا زور قابل تعریف ہے۔فلک کی زہانت کی میں گرویدہ ہوگئی۔فلک بہت آگے جائے گی یہ بات میں گارنٹی سے کہہ سکتی ہوں…محبت ہو عشق ہو…پرسراریت ہو…درد ہو۔فلک ہر عنوان میں میدان مار لے گی.
پیاری فلک اللہ پاک آپکو بہت کامیابیوں سے ہمکنار کریں…بہت خوشیاں اور سکون عطاکریں
اور جلد ہمیں ایسی اور باکمال کہانیاں پڑھنے کو ملیں اللہ پاک آپکا حامی و ناصر ہو آمین

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے