Home / کالم / میں کون ہوں

میں کون ہوں

ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺗﻌﺎﺭﻑ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺩﯾﺐ
بابرالیاس
چیف ایڈیٹر
قلمدان ڈاٹ نیٹ
سوالات
سوال 1۔ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ اور ﮐﺲ ﻧﮯ آپ کا ﻧﺎﻡ ﺭﮐﮭﺎ تھا؟
بابرالیاس, میری خالہ نے میرا نام ثابت عباس رکھا اور میرے والد صاحب نے میرا نام بابرالیاس رکھا جو میری پہچان بنا!!
سوال نمبر2- کیا آپ قلمی نام سے لکھتے ہیں اگر ہاں تو ﻗﻠﻤﯽ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﻮﮞ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮐﯿﺎ؟
نہیں
سوال نمبر 3- آپ کب اور کہاں پیدا ہوئے؟
یکم جنوری 1986 کو چیچہ وطنی میں نانی اماں کے گھر
سوال نمبر 4- ﻭﺍﻟﺪ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ کیا ہے؟ اور ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺧﺮﺍﺝ ﺗﺤﺴﯿﻦ پیش کرتے ہوئے کیا کہنا چاہیں گے؟
میرے والد صاحب کا نام محمد الیاس ہے اور اپنے والدین کے بارے میں اتنا ہی کہنا چاہتا ہوں کہ وہ میرا مان ہیں.
سوال نمبر 5- ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ادبی ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﺎ مختصر ﺗﻌﺎﺭﻑ کرادیں؟اپنے پسندیدہ استاد بارے چند سطور میں بیان کریں اور ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ
ﺧﺎﺹ ﻧﺼﯿﺤﺖ بتائیں جو زندگی میں ہمیشہ آپ کے کام آئی ہو؟
ہو سکتا آپ قبول نہ کریں لیکن یہ حقیقت ہے کہ میرا ادبی کوئی استاد نہیں ہے البتہ میرے بہت ہی قریبی دوست حضرت مولانا سید الطاف حسین شیرازی صاحب, اور ڈاکٹر محمد افضل مغل صاحب کا حوصلہ ضرور شامل ہے,کیونکہ جب میں نے دسمبر 2012 میں لکھنا شروع کیا تو لکھ کر انکے سامنے ضرور رکھتا تھا کہ بتائیں کوئی کمی تو نہیں ہے لہذا یہ دونوں صاحب میری مدد فرماتے تھے جس کے لیے میں انکا شکر گزار ہوں تا قیامت.
سوال نمبر 6- آپ کی ﺗﻌﻠﯿﻢ کتنی ہے اور ﻣﺸﺎﻏﻞ کیا کیا ہیں اور پیشہ یا ذریعہ روزگار کیا ہے؟
میری تعلیم ماسٹر ان مطالعہ پاکستان, دراسات دینیہ دو سال وفاق المدارس اور پیشہ کے اعتبار سے پرائیویٹ سکولز چلا رہا ہوں جہاں میرے پاس اللہ کریم کے فضل سے 200 بچے زیر تعلیم ہیں,
سوال نمبر 7- ﺍﻋﻠﯽ ﮐﺎﺭﮐﺮﺩﮔﯽ کی بنیاد ﭘﺮ ﻣﻠﻨﮯ ﻭﺍﻻ کوئی ﺍﯾﻮﺍﺭڈ , ﺳﻨﺪ یا ﺷﺎﺑﺎﺵ بارے چند خوشگوار باتیں اور تجربات بیان کری.
جی بالکل ہماری ویب کی جانب اسناد, اور کتابی گفٹ مل چکے ہیں
اور گذشتہ سال میری چند تحریریں پڑھ کر پاکستان علماء کونسل کے سیکرٹری جنرل حضرت مولانا اسد زکریا قاسمی صاحب نے کراچی سے چیچہ وطنی آ کر شاباش دی, پھر پاکستان علماء کونسل کے سرپرست اعلی حضرت مولانا حافظ طاہر محمود اشرفی صاحب نے تھپکی دی ایک ملاقات میں,
اور ابھی چند دن پہلے آمریکہ سے پاکستان کے سابقہ صحافی, رائٹر, کالم نگار, حضرت مولانا اختر کاشمیری صاحب نے کال کر کے شاباش دی اور پاکستان آنے پر ملنے کا وعدہ فرمایا.
سوال نمبر8- پسندیدہ ﻣﻮﺿﻮﻋﺎﺕ کونسے ہیں اور کیا کوئی ایسا موضوع ہےجس پر آپ لکھنا چاہتے ہو پر آج تک لکھ نا پائے ہوں اگر ہاں ایسی کونسی وجہ ہے کہ آپ نہیں لکھ پارہے؟ کسی ایک پسندیدہ موضوع باری قارئین کو مختصر الفاظ میں بتائیں.
میرا پسندیدہ عنوان اسلام کے دائرہ کار میں رہتے ہوۓ لکھنا ہے اور ایسا کوئی موضوع نہیں میرے خیال میں جس پر میں نے کچھ نہ لکھا ہو..
سوال نمبر 9.ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ /ﺳﮩﯿﻠﻮﮞ
ﺑﺎﺭﮮ تھوڑا سا بیان کریں؟ کیا ان میں آپ کا کوئی بچپن کا دوست ہے اگر ہے تو مختصر تعارف کرادیں۔
بچپن کا دوست تو ایسا نہیں لیکن میرے تمام دوست میرے لیے سرمایہ ہیں لہذا کسی ایک کے بارے میں لکھ کر ناانصافی نہیں کرنا چاہتا. سوری
سوال نمبر 10.ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ کیا ہے؟ اگر شادی شدہ ہیں تو ﻣﯿﺎﮞ ﯾﺎ ﺑﯿﻮﯼ ﺑﺎﺭﮮ ایک,
ﭘﯿﺮﺍﮔﺮﺍﻑ؟ ازدواجی زندگی کا کوئی خوشگوار و دلچسپ واقعہ اگر ہو تو قارئین کے ساتھ شیئر کریں؟

سال 2009 میں شادی ہو گئ تھی, اللہ کریم کے فضل سے دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے اور خوش ہوں,اور صرف اتنا کہوں گا کہ
ان حسرتوں سے کہہ دو کہیں اور جا بسیں………

سوال نمبر11.ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﻣﺼﺮﻭﻓﯿﺎﺕ ﮐﯿﺎ ﮨﯿں؟ اور ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ میں کیا کرنے کا ارادہ ہے؟
لکھنا ہے اور ٹیچر ہوں اور یہ ہی مستقبل ہے ان شاءاللہ
سوال نمبر12- ﺁﭖ ﮐﺘﻨﯽ ﺗﺤﺮﯾﺮﯾﮟ ﻟﮑﮫ
ﭼﮑﯽ / ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﺷﺎئع ہوئی ہیں؟
بے شمار اور روز نامہ اسلام لاہور میں جمعہ والے دن
روز نامہ دنیا میں مہمان کالم تقریباً پانچ
ساہیوال سجاگ کے لیے تقریباً چار ماہ لکھا ہے
ہماری ویب آن لائن کے تقریباً 179 آرٹیکل لکھ چکا ہوں, اور اب ساری توجہ قلمدان ڈاٹ نیٹ ویب پر ہے,

سوال نمبر13- ﺁﭖ ﮐﯽ ﺩﺱ ﭘﺴﻨﺪﯾﺪﮦ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ
ﺍﻭﺭ ﺩﺱ ﭘﺴﻨﺪﯾﺪﮦ ﻟﮑﮭﺎﺭﯾﻮﮞ ﮐﮯ نام کیا ہیں۔
مجھے کتابوں میں
قرآن مجید, سیرت نبوی صلی اللہ علیہ والہ وسلم, سیرت عشرہ مبشرہ رضی اللہ, سیرت ازواج نبوی صلی اللہ علیہ والہ وسلم, تاریخ اسلام, زاویہ, کلیات اقبال, فضل صاحب کی زندگی, ناصر کاظمی کی دیوان, مسدس حالی, مسائل اسلام, حکام شریعت,
دس لکھاریوں میں
مولانا شبلی نعمانی رح , سید سلمان ندوی رح, ابن اہشام رح, اشفاق احمد رح, مفتی شفیع صاحب رح , اوریا مقبول جان صاحب, جاوید چوہدری صاحب, ہارون رشید صاحب, ڈاکٹر طاہر القادری صاحب, مفتی تقی عثمانی صاحب,
سوال نمبر 14- پڑﮬﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﮦ ﻧﺼﺤﯿﺖ کریں ﺟﺲ ﭘﺮ ﺁﭖ ﮐﺎ ﻋﻤﻞ ﮨﻮﮞ ؟
سچ کا راستہ اختیار کریں!
سوال نمبر 15 – ادبی زندگی میں کوئی دلچسپ واقعہ پیش آیا ہو اگر تو قارئیں کے ساتھ شیئر کریں۔
میری ادبی زندگی کے واقعہ میں کچھ لکھنے والوں کی عزت کا خیال رکھتے ہوئے معذرت چاہتا ہوں صرف کہتے ہوۓ کہ بڑے ظالم ہیں میرے ہمدم بھی…….
سوال نمبر 16- بطور ادیب آپ کو اپنی پہلی اشاعت میں کیا کیا مشکلات پیش آئیں؟ کیا آپ کی کوئی تحریر کسی ادارے یا پبلشر کی طرف سے ریجیکٹ ہوئی ہے؟
دسمبر 2012 سے لکھنا شروع کیا اور ایک سال بعد 23 دسمبر 2013 کو پہلی تحریر روزنامہ اسلام لاہور کے چیف ایڈیٹر مولانا عبدالودود ربانی صاحب کی شفقت کی وجہ سے شائع ہوئی.
سوال نمبر 17- ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺑﺎﺭﮮ آپ کی کیا ﺭﺍﺋﮯ ہے؟ اگر ﺁﭖ ﮐﻮ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﮐﮯ ﺍﻏﺮﺍﺽ ﻭ
ﻣﻘﺎﺻﺪ ﺳﮯ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﮨﮯ ﺗﻮکیا آپ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ
ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮ نا چاہیں گے؟ ﺗﺎﮐﮧ ادبی ﻣﻘﺎﺻﺪ
ﮐﮯ ﺣﺼﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺰﯼ ﻻﺋﯽ ﺟﺎﺳﮑﮯ ؟
میں کہتا ہوں کہ اگر لکھنے والوں کو حوصلہ مل جائے تو انکی منزل کا سفر آسان ہو جائے گا اور اگر حوصلہ رائٹرز یہ کام سر انجام دینے کے لیے کھڑے ہوۓ ہیں تو ان شاءاللہ میں انکے ساتھ ہوں کیونکہ میرا ماننا ہے کہ لکھنے والے قوم کا سرمایہ ہیں….

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے