Home / اسلام / لیلۃ البراءۃ” یعنی “شبِ برات”

لیلۃ البراءۃ” یعنی “شبِ برات”

“تحریر:-
مولانا ابوبکر عبداللہ

صحیح حدیث شریف میں وارد ہے کہ اللہ رب العزت شعبان کی پندرھویں رات کو اپنی مخلوق کی طرف متوجہ ہوتے ہیں اور اپنی مخلوق کی مغفرت فرماتے ہیں سوائے مشرک اور کینہ پرور شخص کے ۔
( سلسلة الأحاديث الصحيحة حدیث نمبر 1144 جلد نمبر 3 صفحہ 135 )از شیخ البانی رح

حضرت امام بیہقی سیدنا ابوثعلبہ الخشنی رضی اللہ عنہ سے آقائے دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم کی یہ حدیث نقل کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا
ترجمہ”شعبان کی پندرھویں رات کو اللہ تعالی مخلوقات کی طرف(بہ نگاہ رحمت خاصہ)متوجہ ہوتے ہیں,مومنوں کی مغفرت فرماتے ہیں اور کافروں کو مہلت دیتے ہیں”
(بحوالہ فضائل لیلۃ النصف من شعبان للشیخ عبدالحفیظ ملک عبدالحق المکی)

ہمارے مولا ومعبودِ حقیقی یوں تو ہر لمحہ اپنے سیہ کار بندوں کہ جانب نظرِ رحمت کیے ہوئےاُن کی توبہ کے منتظر ہیں یہاں تک کہ اپنے پیارے حبیب,امام الانبیاء,سرورِ کائنات,شفیع عاصیاں محمد مصطفٰی,احمد مجتبٰی صلی اللہ علیہ وسلم کی زبانِ مبارک سے اپنے بندوں کا حوصلہ و ڈھارس بندھوائی کہ اگر اس قدر گناہ بھی ہوجائیں کہ آسمان کہ چھت کو جالگیں,بس مجھ سے(توبہ کی شرائط کے ساتھ) معافی مانگ لینا میں سبھی معاف کردونگا(بحوالہ اربعین النووی رح)
بقول شخصے👇

باز آ باز آ ہر آنچہ ہستی باز آ
گر کافر و گبر و بت پرستی باز آ

ایں درگہِ ما درگہِ نو میدی نیست
صد بار اگر توبہ شکستی باز آ

ترجمہ((اے میرے گنہ گار بندے)
واپس آجا! واپس آجا! تو جو بھی ہے تُو واپس آجا!
اگر تو کافر ہے یا آتَش پرست ہے تب بھی تو واپس آجا!
یہ ہمارا دربار نااُمِّیدی کا دربار نہیں ہے!
سو بار بھی اگر تُو تَوبہ توڑ چکا ہے،تب بھی تو واپس آجا!)

لیکن کچھ خاص موقعوں پر اپنی رحمت کا خاص ظہور فرماتے ہیں,
ایک روایت میں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالی شعبان کی پندرھویں رات کو آسمان دنیا پہ تشریف لاتے ہیں اور بخشش دینے کے لیے ندا لگائی جاتی ہے,(بیہقی شریف )

دیوانہ تو مچلے گا یہ سنتے ہی کہ اس کے مولا پہلےآسمان پہ تشریف لاچکے ہیں اور رحمتِ حق بندوں کو بلانے آئی ہے کہ “ہے کوئی معافی مانگنے والا”؟تو آجائے وہ رب کہ جس نے اپنے بندوں کے گناہوں کی پردہ پوشی کی اب وہ معافی دینے کے لیے بھی جلوہ فرما ہیں,بقول شاعر👇
نہیں کہیں جہاں میں اماں ملی,
جو اماں ملی تو کہاں ملی,
میرے جرمِ خانہ خراب کو,
تیرے عفوِ بندہ نواز میں.

آہ,جسے اپنے مولا سے پیار ہو بھلا وہ کیسے رات بھر سو سکے گابلکہ وہ تو ستھرالباس زیبِ تن کرکے اپنے رب کی حضور لمبے سجدے کرکے خوب نیازمندی ظاہر کرے گا,
اسی طرح حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے پندرہ شعبان کو روزہ رکھنے کا بھی حکم فرمایا,(بحوالہ شب برات’فضائل و احکام(شعب الایمان للبیہقی ))

سرورِ دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم اپنی زندگی مبارک میں ایک بار اس رات قبرستان بھی تشریف لے گئے اور مرحومین کےلیے دعا و استغفار فرمایا
(فضائل لیلۃ النصف من شعبان)
ہماری جان,ہمارا مال,ہماری آبرو,ہمارا سب کچھ قربان ہو اُس اعلٰی و بالا نبیِ محترم پر جو کسی بھی موقع پر اپنی امت کو نہ بھولے,

سلام اس پر جو امت کے لیے راتوں کو روتا تھا,
سلام اس پر جو فرشِ خاک پر جاڑے میں سوتا تھا,

سلام اس پر کہ جس نے خوں کے پیاسوں کو قبائیں دیں,
سلام اس پر کہ جس نے گالیاں سن کر دعائیں دیں,

سلام اس پرکہ جس کا نام تسکینِ دل و جاں ہے,
سلام اس پر کہ جس کے خلق کی تفسیر قرآں ہے,

صلی اللہ علیہ وسلم الف الف مرۃ بعدد کل ذرۃ

مختلف احادیث میں وارد ہوا کہ کچھ ایسے لوگ ہیں جن کی بخشش نہیں ہوگی(جب تک کہ سچی توبہ نہ کرلیں)جن میں
👇👇👇👇
1-شرک کرنے والا,
2-کینہ رکھنے والا,
3-قطع رحمی کرنے والا,
4-شلوار ٹخنوں سے نیچے لٹکانے والا,
5-والدین کی نافرمانی کرنے والا,
6-شراب پینے والا,
7-ناحق قتل کرنے والا
8-زنا کرنے والا

چنانچہ سچی توبہ کرکے حق تعالی کے دامنِ رحمت میں جگہ پائی جاسکتی ہے)

اس رات نفلی عبادات کے حوالے مندرجہ ذیل کام کریں,
👇👇👇👇
1-استغفار کی کثرت,
2-درود شریف کی کثرت,
3-قرآنِ کریم کی تلاوت,
4-صدقہ وخیرات,
5-نوافل و صلوۃ التسبیح(انفرادی پڑھیں جماعت جائز نہیں),
6-پوری امت کے لیے دعا,
7-قبرستان جانا مستحب ہے (بشرطیکہ زیادہ رش اور میلے کی صورت نہ بنے نہ چراغ جلائیں جائیں اور نہ ہی خواتین قبرستان جائیں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسی خواتین پہ لعنت فرمائی ہے)

مندرجہ ذیل کاموں سے بچیں
👇👇👇
1-آتش بازی,
2-پیسے کا بے جا خرچ,
3-حلوے مانڈے کی تقسیم,
4-جماعت کی صورت میں مخصوص سورتیں مقرر کرکے مخصوص تعداد میں نوافل,
5-جہاں تک طبیعت ہشاش بشاش رہےنفلی عبادت کریں پھر آرام کرلیں تاکہ تہجد اور نماز فجر باجماعت طبیعت کے نشاط کے ساتھ ادا ہوسکے,
6-گھروں پر لائٹیں وغیرہ لگانے اجتناب کریں,رقم صدقہ کرنا افضل ہے.

آئیے روٹھے رب کو منالیتے ہیں,آئیں تو سہی وہ ضرور لاج رکھیں گے وہی تو ہمارے مولا ہیں جنہیں اپنے بندوں کی آہوں,سسکیوں,کپکپاتے ہاتھوں اور لرزتی زبان کے ساتھ “یا اللہ معافی دے دیں,یااللہ معافی دے دیں,یا اللہ معافی دے دیں”کہنا بہت محبوب ہے ایسے بندے کی تڑپ پہ فرشتے بھی رشک کرتے ہیں,

تیری رحمتوں سے ہوں بے خبر,
یہ میری نظر کا قصور ہے,
تیری رہ گزر میں قدم قدم,
کہیں عرش ہے کہیں طور ہے,
یہ بجاہے مالکِ بندگی,
میری بندگی کا قصور ہے,
ہے خطا یہ میری خطا مگر,
تیرا نام بھی تو غفور ہے,
یہ بتا کہ تجھ سے ملوں کہاں,
مجھے تجھ سے ملنا ضرور ہے,
کہیں دل کی شرط نہ ڈالنا,
“میرا دل گناہوں سے چُور ہے”.
(بتغییر یسیر)

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

One comment

  1. Avatar

    I have been browsing online more than three hours today, yet I never found any interesting article like yours.

    It is pretty worth enough for me. In my view, if all webmasters and bloggers made good content as you did, the web will be much more useful than ever before.

    Greetings! I’ve been following your weblog for some time now and finally got the courage to go ahead and
    give you a shout out from Porter Tx! Just wanted to mention keep
    up the great work! It is appropriate time to make some plans for
    the future and it is time to be happy. I have read this post and if I could I
    desire to suggest you some interesting things or advice.
    Maybe you could write next articles referring to this article.
    I want to read even more things about it!
    http://cspan.org

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے