Home / کالم / وہ تو اللہ والے ہیں!!

وہ تو اللہ والے ہیں!!

تحریر
بابرالیاس
ایڈمن
قلمدان ڈاٹ نیٹ

وہ سر بھی کاٹ دیتا تو ہوتا نہ کچھ ملال
افسوس یہ کہ اس نے میری بات کاٹ دی

‏تبلیغی جماعت دنیا کی دعوتی و اصلاحی تحریکوں میں سب سے وسیع نیٹ ورک رکھنے والی منظم ترین پرامن جماعت اور امت مسلمہ کا قابلِ صد فخر سرمایہ ہے۔حالیہ دنوں میں اس کا نام لے کر جو بے بنیاد الزام تراشی جاری ہے وہ اپنے جرائم کسی اور کے کھاتے میں ڈالنے کی مزموم کوشش ہے
جاوید آفریدی صاحب کا شکریہ جو کہتے ہیں کہ ‏تبلیغی جماعت مجموعی طور پرامت اور قوم کی خیر خواہ اور ایک محب وطن جماعت ہے۔ایک بین الاقوامی وباء کا اس جماعت کے چند افراد میں پایا جانا اس جماعت کی قوم و ملک سے محبت پر کوئی شائبہ نہیں ڈال سکتی ۔مجھے یقین ہے کہ مشکل کے اس گھڑی میں یہ جماعت بمع اکابر کے قوم کے ساتھ نظر ائے گی.
‏‎تبلیغ کی وجہ سے ہمارے گھر اور معاشرہ آبادہے
اگر تبلیغ نہ ہوتا تو اس وقت دنیا میں کوئ بھی مسلمان نہ ہوتا۔
‏‎بہت افسوس کی بات ھےجو تبلیغ کےراستےمیں رکاوٹ کر رھےہیں نبیوں والا کام ھے اللہ رب العزت کا مدد اور نصرت جماعت والوں کے ساتھ ھےتمام انسانوں کی فکر ان کا مقصد ھے اللہ رب العزت کےاحکام اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک طریقوں عمل کر رھے ہیں خدارا ان کے ساتھ برائی سے پیش مت آئے.
‏‎‎تبلیغ اور وہ بھی رسول خدا علیہ اسلام کے طریقے سے …
‏‎تبلیغ سےوابسطہ لوگوں کو کرونہ کی آڑ لےکر پریشان کرنا تسلسل ھے ان دین بیزار لوگوں کی شرارت کا جو ھمیشہ تبلیغ سے جلتےھوۓ دکھاۓ دیتے ھیں
‏‎چند میڈیا پرسنز اور بے شرم لوگوں کی طرف سے تبلیغی جماعت کے خلاف پراپیگنڈہ کیا جا رہا ہے ورنہ تبلیغی جماعت کی تاریخ اٹھا کر دیکھ لیں ہمیشہ سے منظم، مہزب اور ریاست اور حاکم وقت کی اطاعت پر یقین رکھتی ہے جیسا اسلام نے حکم دیا اور کبھی بغاوت کی کوشش تک نہیں کی۔
‏‎امید ہے تبلیغ کے لئے نکلے ہوئے ساتھیوں کو مرغا بنے ہوئے، مساجد میں قید اور ہتھکڑیاں لگے ہوئے دیکھ کر مولانا طارق جمیل صاحب کا حکمران کے نیک ہونے پر اور ایمان پختہ ہوگیا ہوگا‎
‏‎دعوت تبلیغ کی وجہ سے ہمارے گھر اور معاشرہ آبادہے
اگر تبلیغ نہ ہوتا تو اس وقت دنیا میں کوئ بھی مسلمان نہ ہوتا۔
‏‎انشاءاللہ..
ہر چیز اللہ کی طرف سے ہے , مشکل کی اس گھڑی میں ہمیں اپنے ہاتھ مضبوط کرنے کی ضرورت ہے .اور اس کے ساتھ ساتھ ہمیں دعوت تبلیغ کو سپورٹ کرنے کی بھی ضرورت ہے .
‏‎مجھے تو سمجھ نہیں آتی ان لوگوں کی جہاں اتنے گندے گناہ انسان کے دھل جاتے ہیں جہاں ہر مرض ختم ہوجاتا ہے وہاں طواف بند کروا دیا تھا اب تبليغ احتیاط بہتر ہے ٹھیک لیکن اتنا بھی دور نہ کروں ہر چیز سے دوری ہو جائے.
‏‎کچھ شدت پسند لوگ فرقہ واریت کو ہوا دے رہےہیں اور ان کا مقصد عوام کو اشتعال دلانا ہے. لیکن انشاءاللہ یہ اپنی ناپاک کوششوں میں کامیاب نہیں ہوں گے.
میں کہتا ہوں کہ ‏‎تبلیغی جماعت والوں کو پریشان کرکے اللہﷻکے غضب کو دعوت نہ دیں جو پوری امت کیلۓ رو رو کر دعایں مانگتے ہیں انکی وجہ سے وبایں ٹلتی ہیں.
‏رسولِ ڪریم ﷺ نـــے اِرشاد فرمایا ”

بیشک ‘ اللّٰه تعالیٰ نـے میری اُمت سے خطا ‘ بھول چوک اور زبردستی کروائے گئے کام معاف کردیے ہیں ”
(ابنِ ماجہ حدیث: 2043)
‏کاش میں دور پیمبر میں اٹھایا جاتا
با خدا قدموں میں سرکار کے پایا جاتا
ساتھ سرکار کے غزوات میں شامل ہوتا
ان کی نصرت میں لہو میرا بہایا جاتا
ریت کے ذروں میں اللہ بدل دیتا مجھے
اور مجھے راہ محمد میں بچھایا جاتا
خاک ہو جاتا میں سرکار کے قدموں کے تلے
خاک کو خاک مدینہ میں ملایا جاتا
‏مل کے سب لوگ مجھے مٹی سے گارا کرتے
پھر مجھے مسجد نبوی میں لگایا جاتا
کاش اے کاش میں ہوتا کوئی ایسی لکڑی
جس کو سرکار کےمنبر میں لگایا جاتا
یا اترتا میں کسی نعت کے مصرعے بن کے
روبرو ان کے میں ان کو ہی سنایا جاتا
گھاس ہی ہوتا مدینے کے گلی کوچوں کی
اور سرکار کے ناقے کو کھلایا جاتا
‏ان کے روضے کے در و بام سجانے کے لئے
روزنوں میں میری آنکھوں کو لگایا جاتا
لایا جاتا سر دربار اسیروں کی طرح
حکم پر ان کے میں آزاد کرایا جاتا
ہوتے اس دور کا قصہ کوئی نور و فرحان
آج کے دور میں بچوں کو پڑھایا جاتا
کاش میں دور پیمبر میں اٹھایا جاتا

صلی اللہ علیہ والہ وسلم

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے