غزل

غزل
انتخاب
خواجہ مظہر صدیقی
ملتان
📙📙📙📙📙📙📙
ایسی ترقی پر تو رونا بنتا ہے
جس میں دہشت گرد کرونا بنتا ہے

جب اس کی تصویر صدا میں ڈھل جائے
پھر تو میرا “کچھ تو کہونا” بنتا ہے

نو صدیوں کا قصہ کہتا ہے ہم سے
جنگوں میں پشتون کھلونا بنتا ہے

شرط یہی ہے تیرے بدن کا لمس ملے
پیتل کا زیور بھی سونا بنتا ہے

آئینے کا مجھ پر ہنسنا جائز ہے
آئینے پر میرا رونا بنتا ہے

یاد آتا ہے مجھ کو پھر انسان کا مرنا
مٹی سے جب کوئی کھلونا بنتا ہے

قیدی پرندے روز خدا سے کہتے ہیں
کیا ہم سب کا باہر ہونا بنتا ہے؟؟؟

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے