Home / کالم / اسلام نے سب زیادہ عورت کو حقوق دئیے

اسلام نے سب زیادہ عورت کو حقوق دئیے

ازقلم⁦🖋️⁩
حافظ بلال بشیر
🌺🌺🌺🌺🌺🌺
عورت اس کائنات کی ایک عظیم ہستی ہے اور کیوں کہ یہ بھی بنی نوع اِنسان میں شامل ہے ۔ دین اسلام آنے سے پہلے تمام آسمانی مذاہب کے علاوہ بت پرست، آتش پرست اور کئی مذاہب اس دنیا میں موجود تھے لیکن جو عزت،حقوق،حفاظت، پیار، محبت، مقام عورت کو اسلام نے دیا، دنیا کے کسی مذہب نے نہیں دیا۔ اس لیے وہ بھی مرد کی طرح اسلام کو اپنانے، دل وجان سے اسے تسلیم کرنے، اس کے عقائد ونظریات کو من وعن قبول کرنے اور احکام و اوامر کو بجالانے کی پابند اور مکلف ہے۔
ایک عورت اگراس دنیا میں کامیابی وکامرانی، عزت وعافیت، قلبی وروحانی سکون کی آر زو مند ہے، اور وہ موت کی سختیوں، برزخ کی ہولناکیوں، قیامت کی ہوش رُبا پریشانیوں،اور جہنم کی تباہ کاریوں سے’’ نجات ‘‘کے لیے سنجیدہ اور فکر مند ہے تو اسے اسلامی شریعت کی پاس داری کرنی ہوگی اور خود کو احکامِ الٰہیہ کاپابند بنانا ہوگا خواہ وہ ایمانیات وعقائد سے تعلق رکھتے ہوں یا عبادات ومعاشرت سے، اور خواہ وہ اس کے مزاج ورِواج کے موافق ہوں یا مخالف۔
خَلقی اور پیدائشی طور پر عورت مرد کی طرح کائنات کی تمام چیزوں سے افضل وبر تر ہے۔ قدرت نے اسے بھی ان تمام خوبیوں سے مزین کیا ہے جن کی بنا پر وہ ہرمخلوق سے ممتاز، کائنات کی مخدوم،اور قدرت کا شاہ کار ہونے میں مرد کی برابر کی شریک ہے، اسے بھی قوتِ گویائی عطا کی گئی ہے، عقل وخرد سے نوازا گیا، کرامت و شرافت کا تاج پہنا یا گیا، پاکیزہ چیزیں اس کی غذاقرار پائیں،تخلیق کے بہترین سانچے میں ڈھال کر اسے’’ سر ‘‘بلند کرکے چلنا سکھایا گیا، نسلِ انسانی کے تسلسل میں اسے بنیادی عنصر کی حیثیت دی گئی ۔
تاہم جب مرد وعورت کا ایک دوسرے کے بالمقابل جائزہ لیا جاتا ہے تو یہ بات روزِ روشن کی عیاں ہوجاتی ہے کہ مرد کو عورت پر تخلیقی طور پر تفوق اور برتری حا صل ہے، قدرت نے مرد کی تخلیق اس انداز سے کی ہے کہ وہ مشکل کاموں کو انجام دے سکے بلند و بالا عزائم کو بروئے کار لاسکے۔ خوف و خطر کے ماحول میں اپنے حواس سلامت رکھ سکے، سفر کی لمبی لمبی مسافتیں بآسانی طے کرسکے،دشمنوں سے اپنی اور ’’اپنوں ‘‘کی عزت وآبرو، جان ومال کی حفاظت کر سکے وغیرہ۔
اس کے برعکس عورت ’’صنفِ نازک ‘‘ہے اور اس کی نزاکت و لطافت کی وجہ سے تصویر کائنات رنگین ودل کش ہے، وہ مرد کی بہ نسبت کم زور وکم ہمت ہے،جلد غصہ ہونے والی اور جلد گھبرا جانے والی ہے،گھریلو اور چھوٹے کاموں میں اس کا ذہن خوب چلتا ہے، بچوں کی نفسیات سمجھنے اور ان کی پرورش وتربیت میں اس کا کوئی ثانی ہے نہ بدل، وغیرہ،یہی قدرت کا فیصلہ اور فطرت کا ضابطہ ہے،اس حقیقت کا انکار سورج کی روشنی کے انکارکے مرادف ہے اور اس کو مسترد کردینا فطرت سے بغاوت کہلاتا ہے۔
اس کائنات میں مرد و عورت دونوں کو الگ الگ ذمہ داریاں دی گئی ہیں اور اللّٰہ پاک نے سیدھا راستہ بھی بتا دیا ہے اور شیطان کا راستہ بھی، اب اگر کوئی شیطان کے راستے پر چل نکلتا ہے اور توبہ سے پہلے موت آ جاتی ہے تو اللّٰہ پاک کے سامنے ایک ایک منٹ کا جواب دینا ہو گا ، اس لیے میں تمام مسلمان عورتوں سے درخواست کرتا ہوں کہ خدارا، شیطانی راستوں پر نہ چلیں اور کفر کی انجیوز آزادی مارچ کے نام پر جو کہ اصل میں آپ سے آزادی چھیننے کی کوشش کر رہی ہیں اور کفر کا غلام بنانے، چند دن کی زندگی کو فحاشی و عریانی کی طرف مائل کرنی کی کوشش کر رہی ہیں ایسے ہتھکنڈوں سے پچیے۔ کفر کے آلہ کار بننے سے اپنے آپ کو بچائیے۔ اور اپنے آپ کو کو پاک اور صاف رہنے والوں میں شمار رکھیئے۔ اللّٰہ پاک دنیا و آخرت میں کامیابیاں عطا فرمائے گا اور سب سے زیادہ معاشرے میں مقام،عزت،مرتںہ بھی آپ ہی کے مقدر ہو گا۔

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے