Home / کالم / میں اپنا ذمہ دار خود ہوں*

میں اپنا ذمہ دار خود ہوں*

*تحریر:
*طلحہ زبیر*
📙📙📙📙📙
زندگی کے اس طویل،کٹھن اور مشکل ترین سفر میں ہر انسان کامیاب ہونا چاھتا ہے۔انسان جتنی بڑی کامیابی کی طرف جاتا ہے اسے اتنی بڑی قیمت ادا کرنی پڑتی ہے۔وہ قیمت اسٹریس یعنی کہ ذھنی دباو ہے۔یہ قیمت ادا کئے بغیر کامیابی کا حصول نا ممکن ہے۔لوگ تھوڑی سی قیمت ادا کر کے بڑی کامیابی کی تمنا کرتے ہیں۔حد تو یہ ہے کہ جس انسان کو فیل ہونا چاھئے وہ بھی ٹاپ کرنے کی توقع لگا کر بیٹھا ہوتا ہے۔یہ بہت بڑا اپنے آپ کے ساتھ دھوکا ہوتا ہے۔اور یہ اکثر نالائق دوستوں اور اپنے مزاج کی وجہ سے ہوتا ہے۔جو کہ انسان کی زندگی کی سب سے بڑی غلطی ہوتی ہے۔انسان کی زندگی بہت ہی مشکل سفر ہے اتنا مشکل سفر کے اپنا آپ تھکا دینا پڑتا ہے۔کبھی بھوک مر جائے گی۔کبھی مزاج ہی نہیں ہوگا۔کبھی لوگوں کے منفی رویوں،نفرت انگیز لہجوں اور تنقید برائے مذاق سے آپ احساس کمتری کا شکار ہو جائیں گے۔کبھی انسان کہے گا کہ میں کیوں کروں؟میں اتنے میں ہی کافی ہوں۔میں آگے کیوں جاوں؟کیا سب کا ٹھیکہ میں نے ہی اٹھا رکھا ہے؟
تو یاد رکھئے!
“زندگی جینے کا مزہ ہی زندگی میں اچھی ویلیوز بنانے کا مزہ ہے”
اگر آج آپ دشمنوں کو دوست نہیں بنا سکتے تو یقین مانئے اس کے ذمہ دار صرف اور صرف آپ ہیں اور کوئی نہیں۔اور دوستوں کو سجن نہیں بنا سکتے تو اس کے ذمہ دار بھی آپ ہیں۔آپ اپنا اقتدار دوسروں کو نہیں دے سکتے تو اس کے ذمہ دار بھی آپ ہیں۔اگر آپ برے دوستوں کی صحبت نہیں چھوڑ سکتے تو اس کے ذمہ دار بھی آپ ہیں۔بعض اوقات منفی سوچ اور منفی رویے کسی فرد کے مزاج کا حصہ بن جاتے ہیں۔ان میں ایک رویہ ہمیشہ دوسروں کی خامیاں تلاش کرنا ہے۔اگر آپ کامیاب ہونا چاھتے ہیں تو اس رویے کو زندگی سے نکال دیجئے۔یہ رویہ انسان کو تنہا کر دیتا ہے۔لوگوں کی بہت بڑی تعداد ایسی ہے جو اپنی ساری ذہانت دوسروں کی خامیاں تلاش کرنے میں لگا دیتے ہیں۔کسی نے کیا خوبصورت بات کہی۔”اپنے بارے میں کبھی برا مت سوچو کیونکہ یہ کام آپ کے کچھ رشتہ دار بہت پہلے سے آپ کے ساتھ کر رہے ہوتے ہیں”۔اسی طرح کچھ ایسے منفی رویے جو ایک محنتی اور مستقل مزاج انسان کو بھی نا کام بنا دیتے ہیں۔۔جیسا کہ دوسروں کی بلاوجہ بے عزتی کرنا ایک ایسا رویہ ہے۔جس میں انسان سمجھتا ہے کہ دوسروں کو ہنسانے کیلئے میں بہت اچھا کام کر رھا ہوں۔وہ انسان ایسی بے ہودہ حرکتیں کر جاتا ہے کہ حیرانگی ہوتی ہے۔ایسے منفی رویے کو بھی زندگی سے نکال دینا چاھئے۔اسی طرح کچھ لوگوں کا ایک رویہ یہ ہے کہ کام کی بات نہیں سیکھنی بلکہ بے مقصد ہی اِدھر اُدھر کی ہانکنی ہے۔بہت سارے لوگوں کو دنیا جہاں کے بارے میں سارا علم ہوتا ہے لیکن اپنے بارے میں لا علم ہوتے ہیں۔اس رویے کو بھی زندگی سے نکال دینا چاھئے۔بعض لوگ زندگی میں ابھی کچھ بنے نہیں ہوتے لیکن پہلے سے ہی محسوس کروانا شروع کر دیتے ہیں۔جیسے کئی افسروں کے بچے اپنے آپ کو افسر محسوس کراتے ہیں۔یہ بھی ایک منفی رویہ ہے اس کو بھی زندگی سے نکال دینا چاھئے۔
شاعر مشرق علامہ اقبال نے کیا خوب کہا۔
اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی
میرا نہیں بنتا تو نہ بن اپنا تو بن

کامیابی کے سفر میں انسانی مزاج کو سمجھنا بہت ضروری ہے۔انسان جب بھی عظمت کی طرف جاتا ہے تو وہ سب سے پہلے وہ اپنے کام پہ فوکس کرتا ہے۔جب آدمی پوری یکسوئی کے ساتھ مخلص ہو کر انسانیت کیلئے کام شروع کرتا ہے تو پھر قدرت بھی انعام کے طور پہ اسے منزل عطا کر دیتی ہے۔ایک کامیاب انسان اپنے کام پہ فوکس کرتا ہے۔لوگوں کی باتوں کی پرواہ کئے بغیر اپنی ذات اور مشن کے ساتھ مخلص ہو کر انسانیت کیلئے کام کرتا ہے۔”فوکس” سے مراد ہے کہ اپنا تن،من،دھن ایک شئے پر لگا دیا جائے۔فوکس کا مطلب ہے کہ اپنی بے شمار خواہشات کو ذبح کر دینا اور ذبح کرنے کے بعد فقط ایک چیز پر تمام توانائیاں لگا دینا۔رب تعالی کی دی گئی صلاحیتوں اور وقت کی قدر کیجئے۔اگر لوہے کو استعمال میں نہ لایا جایا تو اسے زنگ لگ جاتا ہے۔تو آپ رب تعالی کی دی گئی صلاحیتوں کو استعمال کئیے بغیر کیسے رک سکتے ہیں؟
آپ اپنی ذات اور مشن کے ساتھ مخلص ہو کرشوق،ہمت،جذبہ،جنون،لگن اور مستقل مزاجی کے ساتھ کام کریں گے تو یہی کام آپ کیلئے سکون و طمانیت کا سبب بن جائے گا۔یہاں تک کہ کامیابیاں بھی آپ کے قدم چومنا شروع کر دیں گی۔پھر سچائی اور تڑپ کے ساتھ آگے بڑھتے رہیں۔کیونکہ منزل تو اب آپ کو نظر آ ہی چکی ہے۔

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے