Home / کالم / جدید سائنسی دنیا کے تضاد

جدید سائنسی دنیا کے تضاد

انتخاب ؤ تحریر
راجہ نوید حسین
🌺🌺🌺🌺🌺🌺

حق اور باطل کی جنگ روزے اول سے جاری ہے شریعت نازل ہوئی اور منسوخ ہوتی رہیں تا وقت یکیہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا ظہور وا اور ختمِ نبوت پر نزول قرآن سے شریعت وہ دین کی تکمیل مکمل ہوگئی ۔اگر آپ سیدابوالاعلیٰ مودودی سے متعلق کتاب پڑھنے کی شائق ہے تو ان موصوف کو ضرور پڑھیں مذکورہ مضمون انٹرنیٹ پر مہیا کی گئی معلومات کا اخذ شدہ ہے اسے دین کی دلیل کے لئے استعمال نہ کیا جائے مولانا وحید الدین خان اسلامک سکالر یکم جنوری، 1925ء کو بڈھریا اعظم گڑھ، اتر پردیش برٹش انڈیا میں ولادت ہوئی۔ مدرسۃ الاصلاح اعظم گڑھ کے فارغ التحصیل عالم دین، مصنف، مقرر اورمفکر جو اسلامی مرکز نئی دہلی کے چیرمین، ماہ نامہ الرسالہ کے مدیر ہیں اور1967ء سے 1974ء تک الجمعیۃ ویکلی(دہلی) کے مدیر رہ چکے ہیں۔ آپ کی تحریریں بلا تفریق مذہب و نسل مطالعہ کی جاتی ہیں۔ خان صاحب، پانچ زبانیں جانتے ہیں، (اردو، ہندی، عربی، فارسی اور انگریزی) ان زبانوں میں لکھتے اور بیان بھی دیتے ہیں، ٹی وی چینلوں میں آپ کے پروگرام نشر ہوتے ہیں۔ مولانا وحیدالدین خاں، عام طور پر دانشور طبقہ میں امن پسند مانے جاتے ہیں۔
مولانا وحید الدین خاں کی خودنوشت تحریروں پر مبنی سوانح عمری “اوراق حیات” شائع ہوگئ ہے، جو ایک ہزار صفحات پر مشتمل ہے. اس کتاب کو اردو زبان معروف سوانح نگار شاہ عمران حسن نے دس سال کی طویل محنت کے بعد مرتب کیا ہے . اس جاں گسل کام پر تبصرہ کرتے ہویے مولانا وحید الدین خاں نے ایک بار کہا کہ جو کام میں پوری زندگی نہ کر سکا اسے شاہ عمران حسن صاحب نے کیا ہے.ان کا مشن ہے مسلمان اور دیگر مذاہب کے لوگوں میں ہم آہنگی پیدا کرنا۔ اسلام کے متعلق غیر مسلموں میں جو غلط فہمیاں ہیں انہیں دور کرنا۔مولانا وحید الدین خان، جنہیں اے گریٹ سائنٹیفک سینٹ آف مسلم ورلڈ بھی کہا جاتا ہے، کو بہت سے لوگوں کی طرف سے تنقید کا سامنا بھی ہے۔ ان کے متعلق کہا جاتا ہے کہ اِنہیں ہر اپنے دیس کے مسلمانوں کے لئے ان کے خیالات اتنے واضح نو ہے ہے ہندوؤں کے محبوب ہونے کے باعث اکثر حکومتی اور ہندو تنظیموں اور جماعتوں کی جانب سے خُطبات کے لیے مدعو کیے جاتے ہیں، جہاں وہ مسلمانوں پر خوب نوکیلے الفاظ ااستعمال کرتے ہیں۔ اِن کا مزید کہنا ہے کہاپنے دیس کے حوالے سے کی اسلامی جماعتیں ذرہ برابر اشاعتِ اسلام اور تبلیغ کے لیے کام نہیں کر رہیں۔ اِن کا یہ بھی خیال ہے ” اِدھر سو سالوں میں کوئی ایسی کتاب نہیں لکھی گئی ہے جس سے اسلام کو کوئی فائدہ پہنچ رہا ہو۔ مولانا کے متعلق کہا جاتا ہے کہ اُن کا قلم صرف مولانا مودودیؒ، مولانا حمید الدین فراہیؒ، مولانا اصلاحیؒ ،علامہ اقبالؒ اور علامہ ابو الحسن ندویؒ پر ہی تنقید کرتا ہے مسلمانوں میں مدعو قوم (غیر مسلموں) کی ایذا وتکلیف پر یک طرفہ طور پرصبر اور اعراض کی تعلیم کو عام کرنا ہے جو ان کی رائے میں دعوت دین کے لیے ضروری ہے۔جدید ویسٹرن اعتراض کی حوالے سے سوچنے کی نئی اصلاحات عیش کرنے میں خان صاحب کا اپنا ایک انداز ہے ان کے نظریات کو مذہبی دلیل نہ سمجھا جائے

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے