Home / کالم / مرد, عورت, ہوس

مرد, عورت, ہوس

تحریر
بابرالیاس
قلمدان
📙📕📙📕📙📕
اہل ہوس تو خیر ہوس میں ہوئے ذلیل
وہ بھی ہوئے خراب، محبت جنہوں نے کی

انسانی معاشرہ اسی وقت مرد و زن کے رابطے کے سلسلے میں مطلوبہ منزل اور نہج پر پہنچ سکتا ہے جب اسلامی نظریات کو بغیر کسی کمی و بیشی کے اور بغیر کسی افراط و تفریط کے سمجھا اور درک کیا جائے اور انہیں پیش کرنے کی کوشش کی جائے.
قرآن کریم میں اللہ تعالی جب اچھے اور برے انسانوں کی مثال دینا چاہتا ہے تو دونوں کے سلسلے میں عورت کا انتخاب کرتا ہے۔ ایک مثال زوجہ فرعون کی ہے اور دوسری مثال حضرت نوح و حضرت لوط علیھم السلام کی بیویوں کی ہے۔ ” و ضرب اللہ مثلا للذین آمنوا امرئۃ فرعون” اس کے مقابلے میں برے، نگوں بخت، منحرف اور غلط سمت میں بڑھنے والے انسان کی مثال کے طور پر حضرت نوح اور حضرت لوط کی ازواج کو پیش کرتا ہے۔ یہاں سوال یہ اٹھتا ہے کہ مرد بھی موجود تھے، ایک مثال مرد کی دے دی ہوتی اور ایک مثال عورت کی دی ہوتی۔ لیکن نہیں، پورے قرآن میں جب بھی ارشاد ہوتا ہے کہ ” ضرب اللہ للذین آمنوا” یا ” ضرب اللہ للذین کفروا” تو دونوں کی مثال عورتوں کے ذریعے پیش کی جاتی ہے۔میرا دین اسلام عورت کے ساتھ اسلامی جمہوری نظام کا سلوک مودبانہ اور محترمانہ ہے، خیر اندیشانہ، دانشمندانہ اور توقیر آمیز ہے۔ یہ مرد و زن دونوں کے حق میں ہے.تاریخ کا مطالعہ کریں تو معلوم ھوتا ھے کہ وہ مذہب اسلام ہی ہے جسکے نقطہ نگاہ سے عورتوں کے لئے علمی، اقتصادی اور سیاسی فعالیت اور سرگرمیوں کا دروازہ پوری طرح کھلا ہوا ہے۔
میں اس سلسلے میں بانو قدسیہ صاحبہ کے شاہکار *مرد_ھوس_کا_پجاری*کا بھی ذکر کرتا چلؤ……
*جب عورت مرتی ھے اس کا جنازہ مرد اٹھاتا ھے ۔اس کو لحد میں یہی مرد اتارتا ھے ۔۔۔ پیدائش پر یہی مرد اس کے کان میں اذان دیتا ھے۔ باپ کے روپ میں سینے سے لگاتا ھے بھائی کے روپ میں تحفظ فراہم کرتا ھے اور شوہر کے روپ میں محبت دیتا ھے۔ اور بیٹے کی صورت میں اس کے قدموں میں اپنے لیے جنت تلاش کرتا ھے ۔۔۔ واقعی بہت ھوس کی نگاہ سے دیکھتا ھے ۔۔۔ ھوس بڑھتے بڑھتے ماں حاجرہ کی سنت پر عمل کرتے ہوئے صفا و مروہ کے درمیان سعی تک لے جاتی ھے ۔۔۔ اسی عورت کی پکار پر سندھ آپہنچتا ھے ۔۔۔ اسی عورت کی خاطر اندلس فتح کرتا ھے۔ اور اسی ھوس کی خاطر 80% مقتولین عورت کی عصمت کی حفاظت کی خاطر موت کی نیند سو جاتے ہیں۔ واقعی ”مرد ھوس کا پجاری ھے۔”*
*لیکن جب ھوا کی بیٹی کھلا بدن لیے، چست لباس پہنے باہر نکلتی ھے اور اسکو اپنے سحر میں مبتلا کر دیتی ھے تو یہ واقعی ھوس کا پجاری بن جاتا ھے ۔۔۔ اور کیوں نا ھو؟؟*
*کھلا گوشت تو آخر کتے بلیوں کے لیے ھی ھوتا ھے
*جب عورت گھر سے باھر ھوس کے پجاریوں کا ایمان خراب کرنے نکلتی ھے۔ تو روکنے پر یہ آزاد خیال عورت مرد کو “تنگ نظر” اور “پتھر کے زمانہ کا” جیسے القابات سے نواز دیتی ھے کہ کھلے گوشت کی حفاظت نہیں کتوں بلوں کے منہ سینے چاہیے ھیں*
*ستر ہزار کا سیل فون ہاتھ میں لیکر تنگ شرٹ کے ساتھ پھٹی ھوئی جینز پہن کر ساڑھے چارہزار کا میک اپ چہرے پر لگا کر کھلے بالوں کو شانوں پر گرا کر انڈے کی شکل جیسا چشمہ لگا کر کھلے بال جب لڑکیاں گھر سے باہر نکل کر مرد کی ھوس بھری نظروں کی شکایت کریں تو انکو توپ کے آگے باندھ کر اڑادینا چاہئیے جو سیدھا یورپ و امریکہ میں جاگریں اور اپنے جیسی عورتوں کی حالت_زار دیکھیں جنکی عزت صرف بستر کی حد تک محدود ھے*
*”سنبھال اے بنت حوا اپنے شوخ مزاج کو*
*ھم نے سر_بازار حسن کو نیلام ھوتے دیکھا ھے”*
*میں نے مرد کی بے بسی تب محسوس کی جب میرے والد کینسر سے جنگ لڑ رہے تھے اور انھیں صحت یاب ہونے سے زیادہ اس بات کی فکر لاحق تھی کہ جو کچھ انھوں نے اپنے بچوں کے لئے بچایا تھا وہ ان کی بیماری پر خرچ ہورہا ھے اور ان کے بعد ھمارا کیا ھوگا؟ میں نے مرد کی قربانی تب دیکھی جب ایک بازارعید کی شاپنگ کرنے گئی اور ایک فیملی کو دیکھا جن کے ھاتھوں میں شاپنگ بیگز کا ڈھیر تھا اور بیوی شوہر سے کہہ رھی تھی کہ میری اور بچوں کی خریداری پوری ھوگئی آپ نے کرتا خرید لیا اپ کوئی نئی چپل بھی خرید لیں جس پر جواب آیا ضرورت ہی نہیں پچھلے سال والی کونسی روز پہنی ھے جو خراب ھوگئی ھوگی، تم دیکھ لو اور کیا لینا ھے بعد میں اکیلے آکر اس رش میں کچھ نہیں لے پاو گی۔ ابھی میں ساتھ ھوں جو خریدنا ھے آج ھی خرید لو۔*
*میں نے مرد کا ایثار تب محسوس کیا جب وہ اپنی بیوی بچوں کے لئے کچھ لایا تو اپنی ماں اور بہن کے لئے بھی تحفہ لایا، میں نے مرد کا تحفظ تب دیکھا جب سڑک کراس کرتے وقت اس نے اپنے ساتھ چلنے والی فیملی کو اپنے پیچھے کرتے ہوئے خود کو ٹریفک کے سامنے رکھا۔ میں نے مرد کا ضبط تب دیکھا جب اس کی جوان بیٹی گھر اجڑنے پر واپس لوٹی تو اس نے غم کو چھپاتے ھوئے بیٹی کو سینے سے لگایا اور کہا کہ ابھی میں زندہ ھوں لیکن اس کی کھنچتی ہوئے کنپٹیاں اور سرخ ھوتی ھوئی آنکھیں بتارھی تھیں کہ ڈھیر تو وہ بھی ھوچکا، رونا تو وہ بھی چاہتا ہے لیکن یہ جملہ کہ مرد کبھی روتا نہیں ھے اسے رونے نہیں دیگا۔
خواتین انسانی معاشرے کا ایک لازمی اور قابل احترام کردار ہیں.دین اسلام جامع دین ہے جو اپنے ماننے والوں کی مکمل رہنمائی کرتا ہے اور مکمل تہذیب و جامع نظام حیات کا علم بردار ہے اسلام اس بات کا بالکل روادار نہیں ہے کہ اسلامی تہذیب کو چھوڑ کر کسی دوسری تہذیب کی پیروی کی جائے، بلکہ احادیث میںیہود و نصاری کی تہذیب کی مخالفت کا حکم دیا گیا ہے اور آپ ﷺ نے فرمایا:” من تشبہ بقوم فہو منہم”جو جس قوم کی مشابہت اختیار کرے گا کل قیامت میں اس کا شمار انہی لوگوں میں ہوگا ۔مغربی تہذیب اور مغربی کلچر جسے آپ گندی تہذیب اور ناپاک کلچر کا نام دے سکتے ہیں بد قسمتی سے ہم پر حاوی ہوتی جارہی ہے اور ذرائع ابلاغ و میڈیا کی کرم فرمائی اور ٹی وی اور فلموں کی کارستانی سے ہم اس تہذیب سے نہ صرف مرعوب ہوتے جارہے ہیں؛ بلکہ اس کو اختیار کرنا اپنے لئے باعث فخر سمجھتے ہیں اوراس تہذیب کا حصہ بننا اپنے لئے ترقی کی معراج سمجھتے ہیں ؛یہ سب کچھ اسلام سے دوری اور اسلامی تعلیمات سے ناواقفیت کی بنا پر ہے ۔حضرات صحابہ نے آپ ﷺ کی سنت کو اختیار کرکے اور اسلامی تہذیب کو زندہ کر کے جس ترقی کو حاصل کیا تھا آج اس کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا ہے.
اسلام نے عورت کو مختلف نظریات و تصورات کے محدود دائرے سے نکال کر بحیثیت انسان کے عورت کو مرد کے یکساں درجہ دیا،
المختصر یہ کہنا کسی صورت بھی کسی کے لیے غلط نہ ھو گا کہ یہ اسلام ہی کا کارنامہ ہے کہ اس نے حواء کی بیٹی کو عزت و احترام کے قابل تسلیم کیا اور اس کو مرد کے برابر حقوق دیے بلکہ حقیقت تو یہ ہے کہ اسلامی تاریخ کی ابتدا ہی عورت کے عظیم الشان کردار سے ہوتی ہے۔
اللہ پاک ہمارے معاشرے کو عورت کی عزت کا احترام و مرتبہ سمجھنے کی توفیق عطا فرماۓ تاکہ ہمارے معاشرے سے بے حیائی کا خاتمہ ھو سکے.

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے