Home / اسلام / درس

درس

تحریر:
رانا اسد منہاس

اَیَحۡسَبُوۡنَ اَنَّمَا نُمِدُّہُمۡ بِہٖ مِنۡ مَّالٍ وَّ بَنِیۡنَ.
کیا یہ ( یوں ) سمجھ بیٹھے ہیں؟ کہ ہم جو بھی ان کے مال و اولاد بڑھا رہے ہیں.
نُسَارِعُ لَہُمۡ فِی الۡخَیۡرٰتِ ؕ بَلۡ لَّا یَشۡعُرُوۡنَ.
وہ ان کے لئے بھلائیوں میں جلدی کر رہے ہیں ( نہیں نہیں ) بلکہ یہ سمجھتے ہی نہیں
یہ سورۃ المؤمنون کی آیات نمبر 55 اور 56 ہے جس میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے ان لوگوں کو وارننگ دی جارہی ہے ہے جو مال اور اولاد کے زیادہ ہونے پہ فخر کرتے ہیں اور یہ سمجھتے ہیں کہ مال اور اولاد کا زیادہ ہونا اللہ تعالٰی کے راضی ہونے کی دلیل ہے.کفار بھی یہی سمجھتے تھے کہ ہم تعداد میں زیادہ ہیں اور ہمارے پاس مال کی فراوانی ہے لہٰذا ہمیں کسی صورت عذاب نہیں ہو گا.اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں کو تنبیہ کرتے ہوئے فرمایا کہ ان کا یہ گمان بالکل جھوٹا ہے اور وہ لوگ خوش فہمی میں مبتلا ہیں بلکہ مال اور اولاد کی فراوانی تو ان کے لیے وبال جان بن رہی ہے.اللہ تعالیٰ ان کی رسی ڈھیلی کر کے ان کو کڑی آزمائش ڈال رہے ہیں.
ان آیات کی روشنی میں ہمارے لیے سبق یہ ہے کہ مال اور اولاد کی کثرت ہمارے لیے کڑی آزمائش ہے اور یہ ہرگز آخرت میں ہمارے کام آنے والے نہیں ہیں لہٰذا ہمیں یہ کثرت دیکھ کر خوش نہیں ہونا چاہئے بلکہ اللہ کے حضور توبہ و استغفار کرنا چاہیے.اہل علم فرماتے ہیں کہ جو شخص اللہ کی نافرمانی کرے اور اللہ تعالیٰ کی نعمتوں میں کمی محسوس نہ کرے تو وہ فکر کر لے کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے اس کی رسی دراز کی جا رہی ہے. لہٰذا ہمیں ہر وقت یہ دعا کرنی چاہیے کہ اے اللہ ہمارے اس مال اور اولاد کو ہمارے لیے وبال جان نہ بنانا بلکہ اسے ہمارے لیے رحمت بنا اور ہمیں اس مال کو اپنی راہ میں خرچ کرنے کی توفیق دے اور ہماری اولاد کو نیک,فرمانبردار اور ہمارے لیے صدقہ جاریہ بنا.

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے