Home / کالم / تاریخی نکتہ

تاریخی نکتہ

ایک تاریخی نکتہ.!
ياايهاالناس الست اولي بکم من انفسکم ….؟
تحریر و تحقیق :
سجادحسین

عزیزان گرامی قدر ، جب بھی یہ جملہ بولا جاتا ہے یا میدان غدیر میں مولا کی ولایت کا تذکرہ آتا ہے کہ ” جس جس کا میں مولا اس اس کا علیؑ مولا ” تو ہمیشہ اہل سنت و دیگر برادران کی جانب سے یہی دلائل پیش کیے جاتے ہیں کہ ” مولا ” کا مطلب دوست یا مدد گار لیا جاتا ہے ،
تھوڑی دیر کیلیے خود کو غدیر کے مقام پر محسوس کیجیے تا کہ مجھے اپنے موقف کو سمجھانے میں آسانی ہو ،

حج کی واپسی پر یہ قافلہ جس میں دنیا بھر کے لوگ جمع ہیں اور اس مقام پر پہنچتے ہیں کہ جب لوگ اپنی اپنی بستیوں کی طرف کوچ کر جائیں گے، ایسے میں رسول اللہؐ حکم دیتے ہیں کہ مقام غدیر پر رک جائیں ،
اک مرتبہ تمام حجاج نے حیرت سے اس بیاباں کو دیکھا اور حکم رسولؐ پر عمل کیا ، منبر پر تشریف لاتے ہی رسولؐ فرماتے ہیں :
ياايهاالناس الست اولي بکم من انفسکم …….؟
کیا میں تم پر خود تم سے زیادہ حق تصرف نہیں رکھتا ….؟
جب سب نے اقرار کیا تو مولا نے کہا :
من کنت مولاه فهذا علي مولاه، یعنی اے لوگو ! اللہ میرا مولا ہے اور میں تمام مومنین کا مولا ہوں اور میں ان کے نفسوں سے زیادہ حاکم و متصرف ہوں ، یاد رکھو ! کہ جس جسکا میں مولا اس کے یہ علیؑ بھی مولا ہیں ،
حضور والا یہ تمام قرائن و شواہد اس بات کا ثبوت ہیں کہ اس مقام پر مولا کے معنی دوست یا مددگار نہیں بلکہ اسکے معنی حاکم و متصرف کے معنی میں ہے
بھلا اتنی گرمی میں ، تپتے صحرا میں ، گھروں کو جاتے ہوئے حاجیوں کو واپس بلانے کی ، پالانوں کا منبر بنانے کی اور خطبہ دینے کا مقصد کیا صرف یہی تھا کہ رسولؐ اعلان کریں علیؑ میرے دوست ہیں ؟
اور اس اعلان سے قبل رسول اللہؐ کا یہ کہنا کہ
ياايهاالناس الست اولي بکم من انفسکم …….؟ واضح بتاتا ہے کہ جس طرح آنحضرتؐ کی ولایت و حاکمیت کا اقرار ضروری ہے اسی طرح علیؑ کی ولایت و حاکمیت کا اقرار بھی لازمی ہے ، اور اسی معنی کی توضیح کیلیے پیغمبرؐ نے اپنی حاکمانہ و متصرفانہ حیثیت کا اقرار لیا تھا ورنہ اسکی ضرورت ہی نہ تھی اور اس اقرار لینے کا مقصد ایک یہ بھی تھا کہ رسول اللہؐ جانتے تھے میرے بعد علیؑ کی تکذیب کی جائیگی اور انکو انکے منصب سے ہٹانے کی کاوشیں کی جائیں گی،

اگر حق و انصاف پسندی سے کام لیا جائے تو اس میں کوئی شبہ باقی نہیں رہتا کہ یہ اعلان اسی اعلان کی صدائے بازگشت تھا جو واقعہ غدیر سے بیس برس پہلے دعوت عشیرہ کے ایک محدود حلقہ میں کیا گیا تھا کہ
” یہ میرا بھائی ، میرا ولی عہد اور میرا جانشین ہے ، اسکی سنو اور مانو “

About Babar

Babar
I am Babar Alyas and I’m passionate about urdu news and articles with over 4 years in the industry starting as a writer working my way up into senior positions. I am the driving force behind The Qalamdan with a vision to broaden my city’s readership throughout 2019. I am an editor and reporter of this website. Address: Chak 111/7R , Kamalia Road, Chichawatni, Distt. Sahiwal, Punjab, Pakistan Ph: +923016913244 Email: babarcci@gmail.com https://web.facebook.com/qalamdan.net https://www.twitter.com/qalamdanurdu

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے